اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

19 نومبر، 2014

Aseefa Zardari defends Imran Khan - ‘justifies’ Imran’s 16 vehicle protocol

 



KARACHI: Look who has jumped to defend Pakistan Tehreek-e-Insaf leader, Imran Khan, after his 16-vehicle motorcade drew a daylong fire from the anti VIP culture quarters across the social media.

You’ll be surprised to know it is Aseefa Bhutto Zardari, the daughter of Co-chairman Pakistan People’s Party, Asif Ali Zardari and the sister of Bhutto-Zardari family scion Bilawal, who is one of the top critics of Khan.

In a message posted on her Twitter timeline, Aseefa said, “It doesn’t matter that IK (Imran Khan) criticizes other political leaders for having security. He is still entitled to security.”


 It is hard to say whether it is satire on Khan, who seems of have failed to practice what he preaches, or she has just used this opportunity to justify those mile-long security escorts that his father, brother, and PPP lawmakers/ministers enjoy.

Earlier, Khan arrived in Peshawar leading a procession of no less than 16 cars. His autocade made a beeline to Chief Minister Khyber Pakhtunkhwa, where he stayed for a while and then went back to Islamabad.

It is not clear if Khan’s procession brought the traffic to a halt on its way to the CM house causing problems for the citizens at large.


کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

نوٹ: ٹائمزآف چترال کی انتظامیہ اور اداراتی پالیسی کا بلاگر کے خیالات سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔ اگر آپ بھی چاہتے ہیں کہ آپ کا نقطہ نظر پاکستان اور دنیا بھر کے ناظرین تک پہنچے توآپ بھی قلم اٹھائیے اور 400 سے 700 الفاظ پر مشتمل اپنی تحریر تصویر، مکمل نام، فون نمبر، سوشل میڈیا آئی ڈیز اور اپنے مختصر مگر جامع تعار ف کے ساتھ ہمیں ای میل کریں ای میل ایڈریس timesofchitral@outlook.com آپ اپنے بلاگ کے ساتھ تصاویر اور ویڈیو لنک بھی بھیج سکتے ہیں۔

اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

loading...

تازہ ترین خبریں