7 نومبر، 2014

Urdu best ghazal of Allama Iqbal RA - خرد مندوں سے کیا پوچھوں کہ میری ابتداء‌کیا ھے



خرد مندوں سے کیا پوچھوں کہ میری ابتداء‌کیا ھے
کہ میں اس فکر میں رہتا ہوں ، میری انتہا کیا ھے 

خودی کو کر بلند اتنا کہ ہر تقدیر سے پہلے
خدا بندے سے خود پوچھے، بتا تیری رضا کیا ھے

مقامِ گفتگو کیا ھے اگر میں کیمیا گر ہوں
یہی سوزِ نفس ھے اور میری کیمیا کیا ھے

نظر آئیں مجھے تقدیر کی گہرائیاں اس میں 
نہ پوچھ اے ہمنشیں مجھ سے وہ چشمِ سرمہ سا کیا ھے

اگر ہوتا وہ مجذوبِ فرنگی اس زمانے میں
تو اقبال اس کو سمجھاتا مقامِ کبریا کیا ھے

نوائے صبحگاہی نے جگر خوں کر دیا میرا
خدایا جس خطا کی یہ سزا ھے وہ خطاء‌کیا ھے ؟


علامہ محمد اقبالؒ - (1938-1877)

کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

تازہ ترین خبریں

Recent Posts Widget