دسمبر 1, 2014

Imran Khan's 'Plan C': announces to shut down Pakistan on December 16. 2014

 


پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے عام انتخابات میں مبینہ دھاندلی اور اس کی غیر جانبدارانہ تحقیقات نہ ہونے کے خلاف احتجاجاً 16 دسمبر کو پورا پاکستان ’بند‘ کرنے کا اعلان کیا ہے۔

اتوار کو اسلام آباد میں ایک بڑے جلسۂ عام سے خطاب کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ احتجاج کا یہ سلسلہ چار دسمبر کو لاہور سے شروع ہوگا اور اس کے بعد آٹھ دسمبر کو فیصل آباد اور 12 دسمبر کو کراچی’بند‘ ہوگا۔

انھوں نے وزیرِ اعظم نواز شریف کو خبردار کیا کہ اگر اس کے باوجود حکومت نے انتخابی دھاندلی کی تحقیقات نہ کروائیں تو پھر وہ ’پلان ڈی‘ پیش کریں گے جسے برداشت کرنے کی سکت شاید حکمراں جماعت میں نہیں ہوگی۔

عمران خان نے کہا کہ تمام جماعتوں نے الیکشن میں دھاندلی کے الزامات لگائے لیکن تحقیقات کے لیے تحریک انصاف ہی نکلی اور اُن کی جماعت نے انصاف کے تمام دروازے کھٹکٹائے لیکن اُنھیں انصاف نہیں ملا۔

اُنھوں نے اپنے پرانے الزام کو پھر دہرایا کہ دھاندلی میں سپریم کورٹ کے سابق چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری اور سابق جج خلیل الرحمن رمدے ملوث تھے۔

عمران خان نے حکومت کو پیشکش کی کہ وہ 2013 کے انتخابات میں دھاندلی کی تحقیقات سے متعلق عدالتی کمیشن بنانے کے لیے اُن کی جماعت سے مذاکرات کریں اور ’یہ مذاکرات وہیں سے شروع ہوں گے جہاں سے ان مذاکرات میں تعطل آیا تھا۔‘

اُنھوں نے کہا کہ سنہ 2015 نئے پاکستان کا سال ہوگا۔
ہمارے سامنے دو راستے ہیں کہ چپ چاپ گھر چلے جائیں یا پھر جہدو جہد کریں، اگر ہم چپ چاپ چلے گئے تو اگلی حکومتیں دھاندلی کے ذریعے آئیں گی اور عوام کے ووٹ کی کوئی حیثیت نہیں ہوگی جبکہ غریب کے پاس سوائے ووٹ کے کچھ نہیں ہے جس کے ذریعے وہ حکومت گرا اور بنا سکتا ہے۔ عمران خان

پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ کا کہنا تھا کہ موجودہ حکمران فلاح و بہبود کے کام کرنے کی بجائے اپنی تجوریاں بھر رہے ہیں۔

حکومت کی جانب سے مختلف ٹی وی چینلوں پر اپنی ذات اور جماعت مخالف اشتہارات کے حوالے سے عمران نے کہا کہ ٹی وی پر یہ اشتہار عوامی پیسے سے چل رہے ہیں اور وہ ان اشتہارات کے خلاف عدالت جائیں گے۔

اس سے قبل جلسے سے خطاب کرتے ہوئے پی ٹی آئی کے نائب چیئرمین شاہ محمود قریشی نے کہا کہ تقریروں کا وقت ختم اور فیصلوں کا وقت آگیا ہے اور یہ فیصلے عوام نے کرنے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ دھرنے کے 109 دن میں عمران خان کی قیادت نے ثابت کر دیا کہ یہ تبدیلی ہے۔

واضح رہے کہ عمران خان نے جس تاریخ کو ملک گیر ہڑتال کا اعلان کیا ہے وہ پاکستان کی تاریخ میں ایک سیاہ دن کے طور پر یاد رکھا جاتا ہے۔

16 دسمبر سنہ 1971 کو مشرقی پاکستان مغربی پاکستان سے الگ ہو کر بنگلہ دیش بن گیا تھا۔

یاد رہے کہ عمران خان نے اس سے پہلے بھی سول نافرمانی کی تحریک شروع کرنے کا اعلان کیا تھا تاہم اسے عوام اور خود اُن کی جماعت کی طرف سے بھی اس اعلان کو پذیرائی نہیں ملی تھی۔


کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

تازہ ترین خبریں

Recent Posts Widget