9 اپریل، 2015

#Iran dispatched a naval destroyer and another vessel to waters near #Yemen


ایرانی جنگی بحری جہازوں کی خلیج عدن کی طرف روانگیایران نے یمنی بحران کے تناظر میں آج بدھ آٹھ اپریل کے روز اپنے دو جنگی بحری جہاز خلیج عدن کی طرف روانہ کر دیے ہیں۔ اس طرح تہران نے یمن کے ساحلوں کے قریب اپنی فوجی موجودگی کو یقینی بنانے کا فیصلہ کیا ہے۔


نیوز ایجنسی روئٹرز کی دبئی سے آمدہ رپورٹوں میں بتایا گیا ہے کہ ایران کے سرکاری میڈیا نے آج اس امر کی تصدیق کر دی کہ تہران حکومت نے یمن کے ساحلوں سے کچھ دور سمندری علاقے میں اپنی فوجی موجودگی کا فیصلہ کیا ہے۔ مختلف نیوز ایجنسیوں کے مطابق یہ فیصلہ اُس بحران میں تہران کا جواب ہے، جو یمن میں ایران نواز حوثی شیعہ باغیوں کے خلاف سعودی عرب کی سربراہی میں بین الاقوامی عسکری اتحاد کے جنگی طیاروں کی طرف سے کیے جانے والے فضائی حملوں کے آغاز کے بعد سے شدت اختیار کر چکا ہے۔

روئٹرز نے پریس ٹی وی کا حوالہ دیتے ہوئے لکھا ہے کہ ایران نے اپنے جو دو جنگی بحری جہاز خلیج عدن کی طرف بھیجے ہیں، ان میں سے ایک البُرز ہے اور دوسرا بوشہر نامی وہ جنگی بحری جہاز جو بنیادی طور پر ایک سپورٹ شپ ہے۔

ایرانی بحریہ کے ریئر ایڈمرل حبیب اللہ سیاری نے پریس ٹی وی کو بتایا کہ یہ جنگی بحری جہاز بندر عباس سے اپنی منزل کی طرف روانہ ہوئے اور اس مشن کا مقصد ’ایران کی جہاز رانی کی صنعت کو سمندری قزاقی‘ کے خلاف تحفظ دینا ہے۔ ایرانی حکام نے اس بحری مشن کو براہ راست یمنی تنازعے سے منسوب نہیں کیا۔

سعودی عرب کی سربراہی میں یمن میں حوثی باغیوں کے خلاف قریب دو ہفتوں سے جاری فضائی حملوں کی ایران نے شروع ہی سے مذمت کی ہے اور اس کا مطالبہ ہے کہ یہ تنازعہ بات چیت سے حل کیا جانا چاہیے۔ اس کے برعکس سعودی عرب کی طرف سے تہران پر الزام لگایا جاتا ہے کہ وہ حوثی باغیوں کی فوجی مدد کر رہا ہے۔ ایران کی طرف سے ان سعودی الزامات کی واضح طور پر تردید کی جاتی ہے۔

ریئر ایڈمرل حبیب اللہ سیاری کے مطابق دونوں جنگی بحری جہاز بحیرہ احمر اور یمن سے جنوب کی طرف خلیج عدن کے علاقے میں حفاظتی گشت کریں گے۔ یہ علاقہ تجارتی جہاز رانی کے لیے دنیا کے اہم ترین سمندری راستوں میں سے ایک ہے اور اِسی کو یورپ اور مشرق وسطٰی کے درمیان گیٹ وے قرار دیا جاتا ہے۔

اسی دوران بیروت سے ملنے والی رپورٹوں میں ایرانی نائب وزیر خارجہ مرتضٰی سرمدی کا حوالہ دیتے ہوئے بتایا گیا ہے کہ یمن میں متحارب فریقین کو آپس کے تنازعے کے حل کے لیے مذاکرات کرنے چاہییں۔ مرتضٰی سرمدی نے بیروت میں ایک پریس کانفرنس کے دوران کہا کہ ان متحارب دھڑوں کو مل کر یمن میں ایک متحدہ قومی حکومت قائم کرنی چاہیے اور ایران اس مقصد کے حصول میں معاونت کے لیے کوشاں ہے۔

ایرانی نائب وزیر خارجہ نے کہا کہ انہوں نے حال ہی میں الجزائر، تیونس، عراق اور لبنان میں وہاں کی قیادت کے ساتھ جو مشورے کیے، ان کا محور بھی یمن ہی کی بحرانی صورت حال تھی۔

ڈی ڈبلیو ڈی ای

کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

تازہ ترین خبریں

Recent Posts Widget