اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

1 اگست، 2015

چترال ایک بارپھر تباہ کن سیلاب کی زد میں۔ سیلاب نے کئی گھر اجاڑ دئے۔

 

چترال (گل حماد فاروقی) تباہی کن سیلاب نے ایک بار پھر متاثرین کی مشکلات میں اضافہ کیا۔ گزشتہ رات پہاڑوں پر گرد و چمک کے ساتھ بارش برسنے کے بعد محتلف برساتی نالوں میں طغیانی آئی جس نے ایک بار پھر تباہی مچادی۔

گزشتہ رات موژ گول، مولین گول، چترال گول، کوغذی، کلدام گول دروش ، سینگور شاہ میران دیہہ، شیشی کوہ وغیرہ میں طغیانی آئی جس کے نتیجے میں مین پشاور چترال شاہراہ کلدام گول کے مقام پر ہر قسم کے ٹریفک کیلئے بند ہوئی۔ 

سابق نائب ناظم یونین کونسل آیون نے بمبوریت سے ہمارے نمائندے کو فون پر بتایا کہ گزشتہ رات سیلاب نے بمبوریت (کیلاش وادی) میں آٹھ پل تباہ کئے۔ رومبور اور بمبوریت کو جانے والے واحد سڑک دوباش میں حراب ہے اور دوباش میں نالے پر پُل بھی سیلاب کی وجہ سے حتم ہوا ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ تیس کے قریب مکانات تباہ ہوئے اور کئی ہوٹلوں اور دکانوں میں بھی پانی داحل ہوئی۔

انہوں نے وفاقی اور صوبائی حکومت سے مطالبہ کیا کہ جنت نظیر وادی کیلاش کی تمام دیہات کی سڑکیں فوری طور پر دوبارہ تعمیر کرکے اس پر ٹریفک بحال کیا جائے تاکہ لوگ فاقہ کشی کا شکار نہ ہو۔ 



واضح رہے کہ جمعہ کی رات سے بارش کا سلسلہ جاری ہے جس کے باعث ہفتے کے روز ہیلی کاپٹر پرواز نہ کرسکے۔

سماجی کاکن صلاح الدین نے موژ گول سے فون پر بتایا کہ موژ گول نالے میں ایک بار پھر سیلاب آیا اور لوگ بے سروسامانی کی حالت میں محفوظ مقامات کی طرف بھاگ رہے ہیں انہوں نے کہا کہ موژ گول کے ستر گھرانوں نے قاقلشٹ کے میدان میں پناہ لیا ہوا ہے مگر کل سے ان کے پاس کھانے پینے کی کوئی چیز نہیں ہے اور بچے بھی بھوکے سو گئے تھے۔

چترال میں سولہ جولائی سے سیلاب کا سلسلہ جاری ہے جس کے باعث گرم چشمہ، مستوج، بونی ، کوراغ، وادی کیلاش اور شیشی کوہ کے راستے تاحال ہر قسم کے ٹریفک کیلئے بند ہیں جس کے باعث سیلاب کے متاثرین کو آشیائے خوردنوش کی شدید قلعت کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ تاہم پاک فوج اور چترال سکاؤٹس کے جوان مشترکہ کاروائیوں میں فوجی ہیلی کاپٹروں میں آشیائے خوردنوش متاثرین تک پہنچانے کی بھر پور کوشش کر رہے ہیں مگر حراب موسم اور مسلسل بارش کی وجہ سے ہیلی کاپٹر کی پروازیں بھی منسوح ہوچکے ہیں۔اور امدادی کاموں میں رکاوٹ پیدا ہوا ہے۔

کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

نوٹ: ٹائمزآف چترال کی انتظامیہ اور اداراتی پالیسی کا بلاگر کے خیالات سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔ اگر آپ بھی چاہتے ہیں کہ آپ کا نقطہ نظر پاکستان اور دنیا بھر کے ناظرین تک پہنچے توآپ بھی قلم اٹھائیے اور 400 سے 700 الفاظ پر مشتمل اپنی تحریر تصویر، مکمل نام، فون نمبر، سوشل میڈیا آئی ڈیز اور اپنے مختصر مگر جامع تعار ف کے ساتھ ہمیں ای میل کریں ای میل ایڈریس timesofchitral@outlook.com آپ اپنے بلاگ کے ساتھ تصاویر اور ویڈیو لنک بھی بھیج سکتے ہیں۔

اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

تازہ ترین

www.myvoicetv.com

مشہور اشاعتیں

loading...

تازہ ترین خبریں