دسمبر 7, 2015

گاؤں دربند کے لوگ جدید دور میں بھی دریا کا گندہ غلیظ پانی پی رہے ہیں: تفصیل پڑھیں

 

گاؤں دربند کے باسی اس جدید دور میں بھی دریا کا گندہ پانی پینے پر مجبور۔ علاقے کے لوگوں کا کہنا ہے کہ ان کیلئے کوئی عبادت گاہ بھی نہیں ہے۔

چترال(گل حماد فاروقی) گاؤں دربند یارخون لشٹ کا پہلا تاریحی گاؤں ہے جہاں 1865 میں افغانستان سے آئے حملہ آؤروں کو پسپا کردیا گیا۔اس زمانے میں ہتھیار نہیں تھے تو علاقے کے لوگوں نے پہاڑوں پر مورچے بنائے اور بڑے بڑے پتھروں کی دیوار بنائی۔ جوں ہی حملہ آؤر اس وادی میں پہنچ گئے تو پہلے سے تھاک میں بیٹھے ہوئے لوگوں نے مورچوں سے ان پر پتھر برسانا شروع کیا جس کے نتیجے میں حملہ آؤر مرنے لگے اور ان لوگوں نے گھوڑوں کے راستے میں زمین میں کیل بھی ٹھونکے تھے جس سے ٹھوکر کھاکر گھوڑے گرنے لگے اور اوپر سے ان لوگوں نے ا ن پر پتھر گرانا شروع کیا۔

حملہ آؤروں میں بارہ سو کے قریب مرگئے اور زندہ بچ جانے والے بھاگنے پر مجبور ہوئے انہوں نے وہاں جاکر بتایا کہ ہم نے انسان تو نہیں دیکھا مگر پتھروں نے ہم پر حملہ کیا۔

اس تاریحی گاؤں کے لوگ گونا گوں مسائل سے دوچار ہیں۔ یہ لوگ اب بھی دریا کا گندہ پانی پینے پر مجبور ہیں۔

اس وادی میں پانی کا کوئی پائپ لائن نہیں ہے علاقے کے خواتین مٹکوں اور بالٹیوں میں دریا کا پانی سروں پر اٹھاکر گھر لاتی ہے جسے پینے اور کھانا پکانے کیلئے استعمال کرتے ہیں۔ ایک معمر خاتون نے اپنی زبان میں کہا کہ یہاں کے لوگ اسماعیلی کمیونٹی سے تعلق رکھتے ہیں مگر ان کیلئے جماعت حانہ یعنی عبادت گاہ بھی نہیں ہے۔

علاقے کے لوگوں کا کہنا ہے کہ اس گاؤں میں نہ تو بجلی ہے نہ سکول اور نہ کوئی ہسپتال یہاں سے بچے بہت دور جاکر دوسرے گاؤں میں سبق پڑھنے پر مجبور ہیں جبکہ دریا سے اُس پار گاؤں کے لوگوں کیلئے دریا پر پُل بھی نہیں ہے وہ بہت دور جاکر دوسرے گاؤں میں پل سے ہوتے ہوئے اپنے گھروں کو پہنچ جاتے ہیں۔

یہاں کے لوگ سردیوں میں اپنے گھروں میں محصو ر ہوکر رہتے ہیں ۔ یہاں صنوبر کے بہترین قسم کے درخت موجود ہیں مگر ان کو فروغ دینے کیلئے کسی ادارے نے حاطر خواہ کام نہیں کیا۔ مقامی لوگ صوبائی حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ ان کیلئے پینے کی صاف پانی، بجلی ، سکول، ہسپتال اور سڑک کا بندوبست کیا جائے تاکہ ان کی مشکلات میں کمی آسکے


کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

تازہ ترین خبریں

Recent Posts Widget