6 مئی، 2016

چترال میں دریا عبور کرتے ہوئے پل سے گر کر باپ بیٹی جان بحق

 


چترال ( نمائندہ ٹائمز آف چترال 6 مئی 2016) ضلع #چترال کے تحصیل مول کہو کے علاقے دراسن میں دریا کے اوپر بنا کچا عارضی پل عبور کرتے ہوئے باپ بیٹی دریا میں گر کرجان بحق ہوگئے۔ باپ بیٹی جوں ہی دریا کے درمیان پہنچے پاوں پھسلے اور دریا میں جاگرے۔ متوفی کا نام شہاب الدین اور کشم گاون سے تعلق رکھتے تھے۔ شہاب کی بیٹی ایف اے طالبہ تھی ، انٹر کا امتحان دلواکربیٹی کو لیکر گاون کی جانب جارہے تھے۔ سیلاب کے بعد علاقے کی سڑکیں تباہ حال ہیں اور جگہ جگہ دریا عبور کرنے کے لئے لکڑیوں سے عارضی پل بنائے گئے ہیں۔ جو انتہائی خطرناک ہیں۔ طلباء اور طالبات کو امتحانی مراکز تک پہنچنے کے لئے شدید دشواریاں پیش آرہی ہیں۔ ان مسائل کی جانب اگر خیبرپختونخوا اور مرکزی حکومتیں توجہ نہ دیں تو مزید جانوں کےضائع ہونے کا خطرہ ہے۔ 

ایک اور المناک واقعے میں چترال میں نوجوان شمس الرحمن ولد اختر نے پستول سے خود کو گالی مار کر خودکشی کرلی، خود کشی کی وجہ معلوم نہ ہوسکی۔ خودکشی کی خبر گھروالوں کو بھی صبح ہوئی۔ 


فائل فوٹو

1 تبصرہ:
Write comments
  1. مرحوم اور مرحومہ بیٹی کو لے کر مدرسے کے امتحانات کے سلسلے میں ( ڑائی بختی ) وریجون لے جارہا تها جہاں اسلامک سنٹر میں تمام مدارس کے سات روزہ امتحانات شروع ہوگئے ہیں بد قسمتی سے حالیہ بارشوں کے باعث سیر کے مقام پر سیلاب کی وجہ سے راستہ بند ہے اسی وجہ سے بعض طالبات کو دریا کے پار متبادل راستہ اختیار کرکے کشم پل عبور کرکے وریجون کی طرف ندی کے کنارے سے ہوتے ہوئے وریجون کے سامنے دوبارہ باریک پل عبور کرنا پڑی ہے جہاں یہ نا خوشگوار واقعہ پیش آیا ہے

    جواب دیںحذف کریں

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

مشہور اشاعتیں

تازہ ترین خبریں

Recent Posts Widget