13 اگست، 2016

دس سال سے اپنے لئے جوتے نہیں خریدے، لیکن علم کا بہت بڑا ذخیرہ جمع کرلیا، خیبر پختونخواہ پولیس کے غریب کانسٹیبل نے وہ کیا جو بڑے بڑے نہ کرسکے

 

پشاور(ابوالحسنین : ٹائمز آف چترال) اعلیٰ تعلیم کے لئے ضروری نہیں کہ دولت کی ریل پیل ہو۔ انسان کے ارادے مصمم ہوں ، جذبہ اور لگن ہو تو کوئی بھی چیز لاحاصل نہیں۔ خیبر پختونخواہ پولیس کے ایک کانسٹیبل نے نہ صرف اپنے ادارے میں اپنے ہم منصبوں کے لئے بلکہ پاکستان اور دنیا بھر کے نوجوانوں کے لئے مثال قائم کردی ہے۔ جی ہاں کے پی پولیس کے کانسٹیبل طاہر خان کام ہی ایسا کردیا ہے کہ جس کی مثال دی جائے۔ تفصیلات کے مطابق کانسٹیبل طاہر خان نے بائیو ٹیکنالوجی میں پی ایچ ڈی کرلی ۔ طاہر خان کے راستے میں غربت و کم دستی دیوار نہ بن سکی ۔ وہ غربت کے باوجود لگن کے ساتھ سخت محنت کی اور اپنی محنت کے بل بوتے یہ سنگ میل حاصل کرنے میں کامیاب ہو گئے۔ 

طاہر خان نے اپنی کہانی یوں بتائی " میں بہت غریب تھا لیکن غربت کے باوجود میری پی ایچ ڈی کرنے کی خواہش نے مجھے چین سے نہیں بیٹھنے دیا اور سخت محنت کرکے میں کامیاب ہو گیا ہوں۔

مرا طریق امیری نہیں، فقیری ہے 

خودی نہ بیچ، غریبی میں نام پیدا کر

اپنی غربت کی دستان سناتے ہوئے طاہر خان کی آنکھوں میں آنسو آگئے ۔ انہوں نے کہا کہ میں نے 10سال سے اپنے لیے جوتے نہیں خریدے اور نہ ہی کبھی مارکیٹ گیا ہوں۔ میرے والد کی دُعا ئیں میرے ساتھ تھیں اور وہ میرے عزم پر خوش اور میری حوصلہ افزائی کرتے تھے ، اب وہ میری کامیابی پر خوش تھے لیکن میری بدقسمتی کہ وہ انتقال کرگئے ، ان کی دعائیں آج بھی میرے ساتھ ہیں ۔ طاہر خان نے کہا کہ میرا "پی ایچ ڈی " کرنا ان لوگوں کے لئے ایک مثال ہے کہ جہ کہتے ہیں کہ خیبر پختونخواہ پولیس میں پڑھے لکھے ملازمین موجود نہیں ہیں، میں بھی ان کے لئے ایک مثال ہوں اور الحمد اللہ خیبر پختونخواہ پولیس میں ایم اے اور ایم فل کے ڈگری ہولڈرز بھی اپنے فرائض انجام دے رہے ہیں۔

نہیں ہے ناامید اقبال اپنی کشت ویراں سے

ذرا نم ہو تو یہ مٹی بہت زرخیز ہے ساقی

کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

مشہور اشاعتیں

تازہ ترین خبریں

Recent Posts Widget