جنوری 13, 2017

لوری ٹنل کو ہفتے میں 2 دن کھولا جائے: ٹرنسپورٹ یونین اور سیاسی رہنماوں کا مطالبہ، بھرپور احتجاج کی دھمکی


چترال (نمائندہ ٹائمز آف چترال 13 جنوری 16) ہر سال کی طرح اس سال بھی بھاری برف باری کی وجہ سے لواری ٹاپ بند ہوگیا ہے۔ مسافر اور مال بردار گاڑیاں ٹنل یا ٹاپ کے دونوں جانب لمبی قطاروں میں کھڑی ہیں۔ اس امر کے باعث چترال کے مختلف سماجی اداروں کے رہنمائوں اور عوام کی جانب سے حکومت پر زور دیا جارہا ہے کہ حکومت لواری ٹنل کو ہفتے میں 2 دن کے لئے کھول دے بجائے ایک دن کے۔ تاکہ چترالیوں کا ملک کے دیگر حصوں سے رابطہ قائم رہ سکے۔ اور علاقے میں اشیاء خوردنوش کی قلت نہ پیدا ہو۔

فضائی سفر کا دارومدار بھی موسم پر ہے اور زمینی راستہ بند ہو تو مڈل کلاس اور غریب لوگ جہاز میں سفر بھی نہیں کرسکتے کیونکہ اس کا کرایہ ہی ایک غریب کے مہنے بھر کی تنخواہ سے زیادہ ہے۔

چترال میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے سماجی اور سیاسی رہنما مولانا جمشید احمد جماعت اسلامی، سعید احمد مسلم لیگ ن ، محمد حکیم پیپلز پارٹی، عزیز رحمان جمیعت علماء ف ، حبیب حسین اور اخلاق احمد رہنما ٹرانسپورٹ یونین نے کہا کہ اگر آئندہ پیر تک نوٹیفیکیشن جاری نہ ہوا تو ضلع بھر میں حکومت مخالف احجاج کا آغاز کریں گے۔ انہوں نے وزیراعظم کے مشیر امیر مقام کو ہدف تنقید بنایا کہ انہوں نے اپنے کئے ہوئے وعدے پر عمل نہیں کیا جو انہوں پشاور میں چترال کمیونیٹی کے ایک اجتماع میں کیا تھا انہوں نے وعدہ کیا تھا کہ لواری ٹنل کو ہفتے میں دو دن آمدرفت کے لئے کھول دیا جائے گا لیکن اس کا پاس نہ رکھ سکا۔

سماجی تنظمیوں نے دھمکی دی ہے کہ اگر حکومت مطالبہ پورا نہ کیا تو وہ لواری ٹنل کی جانب مارچ کریں گے اور اس وقت تک جاری رکھیں گے جب تک کہ حکومت مطالبہ تسلیم کرکے ٹنل 2 دن کے لئے نہ کھول دے۔

کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

تازہ ترین خبریں

Recent Posts Widget