اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

24 جنوری، 2017

بھارتی شہر چنئی میں فسادات ، جلائو گھیرائو جاری، ریاست فوج کے حوالے کرنے پر غور

 

چنئی (ویب ڈیسک) بھارتی سپریم کورٹ کے تامل ناڈو کے مقبول ترین رواتی کھیل جلی کٹو پر پابندی کے خلاف مظاہرے شدت اختیار کرگئے ہیں ہیں، چنئی شہر میں دفعہ 144 کے نفاذ کے باوجود مظاہرے جاری ہیں، پولیس کی مزاحمت پر یہ مظاہرے پرشدد شکل اختیار کر لئے ہیں مظاہرین کا کئی مقامات پر پولیس سے مقابلہ۔ بھارتی حکومت نے شہر میں فوج بھیجنے کا فیصلہ کردیا ہے۔


بھارتی زرائع ابلاغ کے مطابق ریاست تامل ناڈو کے مقبول روایتی کھیل جلی کٹو پر بھارتی سپریم کورٹ نے پابندی لگا دی تھی لیکن ریاست بھر میں کھیل پر پابندی کے خلاف شدید مظاہروں کے بعد حکومت نے ایک آرڈیننس منظور کروا کر روایتی کھیل کی اجازت دی تھی تاہم مظاہرین اس کے مستقل حل کے لئے ڈٹے رہے اور روایتی جلی کٹو پر پابندی کے خلاف 6 روز سے دھرنا دیے بیٹھے تھے ۔ مظاہرین کا کہنا ہے کہ آرڈیننس دائمی نہیں ہے اور یہ  6 ماہ بعد منسوخ کردیا جائے گا اس لئے حکومت اس سلسلے میں مستقل قانون بنائے۔

مظاہرین کا احتجاج ختم کرانے کے لئے پولیس نے ساحل سمندر سے مظاہرین کو جبراً ہٹانا شروع کردیا تھا مظاہرین کے خلاف کریک ڈاؤن شروع کیا تو مظاہرے میں غم و عصہ بڑھ گیا، پولیس نے مظاہرین پر لاٹھی چارج اور شیلنگ کی جس کے بعد مظاہرین پر تشدد ہوگئے۔ کریک ڈاون کی وجہ سے کئی علاقوں میں صورتحال بگڑ گئی اور اخجاجی شدید مشتعل ہوگئے اور پولیس پر پتھراو شروع کردیا، کئی گاڑیوں کو آگ لگادی، خراب حالات کی وجہ سے دفعہ 144 نافذ کردی گئی پولیس کی بھاری نفری تعینات کردیا گیا ہے اور حکومت نے فوج بھیجنے کا فیصلہ کیا ہے۔



کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

نوٹ: ٹائمزآف چترال کی انتظامیہ اور اداراتی پالیسی کا بلاگر کے خیالات سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔ اگر آپ بھی چاہتے ہیں کہ آپ کا نقطہ نظر پاکستان اور دنیا بھر کے ناظرین تک پہنچے توآپ بھی قلم اٹھائیے اور 400 سے 700 الفاظ پر مشتمل اپنی تحریر تصویر، مکمل نام، فون نمبر، سوشل میڈیا آئی ڈیز اور اپنے مختصر مگر جامع تعار ف کے ساتھ ہمیں ای میل کریں ای میل ایڈریس timesofchitral@outlook.com آپ اپنے بلاگ کے ساتھ تصاویر اور ویڈیو لنک بھی بھیج سکتے ہیں۔

اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

loading...

تازہ ترین خبریں