13 جنوری، 2017

پشاور میں لڑکوں کی تصویروں کو فحش اور بہودہ تصاویروں میں تبدیل کرکے سوشل میڈیا پر دینے والے گروہ کا انکشاف: پورا پڑھیں

بشکریہ روزنامہ مشرق

پشاور: صوبائی دارالحکومت پشاور میں شریف گھرانوں سے تعلق رکھنے والے نوجوان لڑکوں کی تصاویر کو فحش اور بیہودہ تصاویر میں تبدیل کرکے سوشل میڈیا پر اپ لوڈ کرنے والے گروہ کا انکشاف ہواہے جبکہ یہ افراد سوشل میڈیا پر جعلی ناموں سے اکائونٹس کھول کر لوگوں کو فرینڈ ریکویسٹ بھجواتے ہیں اور پھر انکے خاندان والوں ماں ، بہنوں اور بیٹیوں کی عزتیں فیس بک پر اچھالتے ہیں۔

زیادہ تر خواتین اور لڑکیاں بدنامی کے ڈر سے خاموش ہوگئی ہیں متاثرہ خاندانوں نے ایف آئی اے کو باقاعدہ تحریری درخواست دیدی ہے جنہیں سائبر کرائمز سیل میں آج طلب کیاگیا ہے گڑھی سیدان اندرون ہشتنگری کے رہائشی نوجوانوں ارسلان خان ولد نوراسلام ،وقار اور آفتاب نے مشرق کوبتایاکہ گزشتہ تین ماہ سے جعلی نام کے ذریعے سوشل میڈیا پر اکائونٹ کھولا گیاہے جن کے نام وقتاًفوقتاً تبدیل کئے جاتے ہیں ابتداء میں جعلی آئی ڈی بناکر لوگوں کو فرینڈز ریکویسٹ بھیجتے تھے۔

جب علاقے کے متعدد نوجوان سوشل میڈیا پر مذکورہ آئی ڈی کیساتھ لنک ہوگئے تو انہی لوگوں کو گالیاں دینی شروع کردی اور بعدازاں بات علاقے کی خواتین اور لڑکیوں سے متعلق سوشل میڈیا پر نازیبا الفاظ تحریر کرتے اور علاقے کے لوگوں کی عزتیں اچھالتے تھے جس کے بعد انہی آئی ڈیز کے ذریعے علاقے کے شریف گھرانوں سے تعلق رکھنے والے نوجوانوں کی تصاویر اٹھاکر اسکے ساتھ بیہودہ اور فحش تصاویر لگاکر اپ لوڈ کرنا شروع کردیا جس پر اکثر و بیشتر علاقے کے لوگوں کے مابین لڑائی جھگڑے بھی ہوتے رہے ہیں اس حوالے سے متعدد بار تھانہ ہشتنگری پولیس کو درخواستیں دیں لیکن کوئی شنوائی نہیں ہوئی اب یہ افراد لوگوں کے گھروں کو باقاعدہ خطوط ارسال کرنے لگے ہیں جس میں انکی خواتین ،ماں بہنوں اور بیٹیوں سے متعلق نازیبا الفاظ تحریر کئے ہوتے ہیں معاملہ روز بروز خراب ہوتا جارہاہے جس سے ابتک ایک درجن سے زائد نوجوان اور گھرانے متاثر ہوئے ہیں متاثرہ خاندانوں نے معاملہ ایف آئی اے پشاورسرکل کیساتھ اٹھاتے ہوئے گزشتہ روز باقاعدہ ایک تحریری درخواست سائبر کرائمز سیل کو دیدی ہے جس کے نتیجے میں ایف آئی اے پشاورسرکل نے تحقیقات شروع کرتے ہوئے متاثرہ افراد کوبیان ریکارڈ کرانے کیلئے آج بروز بدھ طلب کرلیاہے متاثرہ خاندانوں نے وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا پرویز خٹک ،آئی جی ناصر خان درانی اور ایف آئی اے حکام سے نوٹس لینے اورملوث افراد کی گرفتاری کامطالبہ کیاہے ۔

یہ خبر ڈیلی مشرق میں 11 جنوری 2017 کو شائع ہوئی ہے۔


کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

تازہ ترین خبریں

Recent Posts Widget