اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

1 مئی، 2017

گائے چُرانے کے الزام میں ہندووں انتہا پسندوں نے 2 مسلمانوں کو موت کے گھاٹ اتار دیا

 

گائے چُرانے کے الزام میں ہندووں انتہا پسندوں نے 2 مسلمانوں کو موت کے گھاٹ اتار دیا

بھارت میں انتہا پسندی اپنے عروج پر ہے لیکن دنیا کو صرف پاکستان نظر آتا ہے۔ کشمیر سے لیکر بھارت کے اندر تک مسلمانوں کا جینا ہندو انتہا پسندوں نے حرام کر رکھا ہے۔ گزشتہ دنوں بھارت میں گاڑے چرانے کے الزم میں دو مسلمانوں کو سر عام قتل کردیا گیا لیکن لیکن بھارتی قانون بے بس ہے۔ پہلے واقعے میں بھارت کے آسام کے علاقے ناگاون میں ہندوں کے ایک گروپ نے 2 مسلمانوں پر حملہ آورہوا، جن پر الزام یہ لگایا گیا کہ یہ گاڑے چُرانے کی کوشش کر رہے تھے۔ جن پر بری طرح تشدد کیا گیا۔

پولیس کے مطابق اطلاع پہنچے جب پولیس وقوعہ پر پہنچی تو دونوں افراد پر بری طرح تشدد کیا جارہا تھا ۔ جنہیں فوری طور پر ہسپتال لے جایا گیا لیکن وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے جان بحق ہوگئے۔ 


کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

نوٹ: ٹائمزآف چترال کی انتظامیہ اور اداراتی پالیسی کا بلاگر کے خیالات سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔ اگر آپ بھی چاہتے ہیں کہ آپ کا نقطہ نظر پاکستان اور دنیا بھر کے ناظرین تک پہنچے توآپ بھی قلم اٹھائیے اور 400 سے 700 الفاظ پر مشتمل اپنی تحریر تصویر، مکمل نام، فون نمبر، سوشل میڈیا آئی ڈیز اور اپنے مختصر مگر جامع تعار ف کے ساتھ ہمیں ای میل کریں ای میل ایڈریس timesofchitral@outlook.com آپ اپنے بلاگ کے ساتھ تصاویر اور ویڈیو لنک بھی بھیج سکتے ہیں۔

اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

loading...

تازہ ترین خبریں