اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

13 جون، 2017

استاذ کی بچی پر بہیمانہ تشدد، بچی جان بحق ہوگئی

 

غذر ( ٹائمز آف چترال ۔ نیوز ڈیسک )خاتون استاذ کی 11 سالہ بچی پر تشدد، بچی جان بحق ہوگئی۔ تفصیلات کے مطابق گلگت بلتستان کے ضلع غذر کے ایک سرکاری سکول میں استاد نے ایک 11 سالہ بچی تشدد کیا جس سے بچی جاں بحق ہوگئی۔غذر پولیس نے خاتون استاد کو گرفتار کرکے واقعے کی تفتیش شروع کردی ہے۔

سپرنٹنڈنٹ پولیس (ایس پی) غذر فیصل ظہور نے میڈیا کو بتایا کہ ضلع غذر کے علاقے شیر قلع سے تعلق رکھنے بچی کے والدین نے گاہکوچ ویمن پولیس اسٹیشن میں درخواست دی ہے جس میں انہوں نے موقف اپنایا ہے کہ ان کی بچی پر سکول استاذ نے تشدد کیا تھا جس سے وہ جان بحق ہوئی ہے۔ بچی کے والدین نے استاذ پر الزام لگایا ہے کہ ان کی بیٹی کو اسکول ٹیچر نے کلاس کے دوران لوہے کی سلاخ سے مارا، جس سے بچی کی ٹانگوں پر شدید زخم آئے تھے اور بعدازاں ٹانگوں کی ہڈیوں میں انفیکشن ہوگیا، جو بڑھ کر بچی کی موت کا سبب بنا۔ والدین کا اپنی درخواست میں کہنا ہے کہ بچی کو علاقے کے نجی ہسپتال لے جایا گیا، جہاں ڈاکٹروں نے اسے علاج کی غرض سے گلگت کے کمبائنڈ ملٹری ہسپتال لے جانے کی تجویز دی، لیکن پیر (12 جون) کی صبح بچی فوت ہوگئی ۔

ایس پی ظہور کہا کہنا ہے کہ پوسٹ مارٹم کے بعد لاش ورثاء کے حوالے کردی گئی، ان کا مزید کہنا تھا کہ ابھی اس بات کی تحقیقات ہورہی ہیں کہ بچی کی موت استاد کے تشدد سے ہوئی ہے یا موت کی وجہ کچھ اور ہے۔ انہوں نے کہا کہ جب پولیس خاتون ٹیچر کو گرفتار کرنے کے لئے شیر قلع پہنچی تو علاقے کے لوگوں نے پولیس پر پتھراؤ کیا ۔ پولیس ٹیم پر حملہ کرنے والوں کے خلاف مقدمہ درج کرلیا گیا ہے۔

کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

نوٹ: ٹائمزآف چترال کی انتظامیہ اور اداراتی پالیسی کا بلاگر کے خیالات سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔ اگر آپ بھی چاہتے ہیں کہ آپ کا نقطہ نظر پاکستان اور دنیا بھر کے ناظرین تک پہنچے توآپ بھی قلم اٹھائیے اور 400 سے 700 الفاظ پر مشتمل اپنی تحریر تصویر، مکمل نام، فون نمبر، سوشل میڈیا آئی ڈیز اور اپنے مختصر مگر جامع تعار ف کے ساتھ ہمیں ای میل کریں ای میل ایڈریس timesofchitral@outlook.com آپ اپنے بلاگ کے ساتھ تصاویر اور ویڈیو لنک بھی بھیج سکتے ہیں۔

اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

loading...

تازہ ترین خبریں