22 ستمبر، 2017

پسماندہ علاقوں کی غریب خواتین کے لئے ٹیف فاؤنڈیشن نے 3 ماہ پر مشتمل ٹریننگ کورس کا آغاز کردیا

 

کراچی: خواتین کو ووکیشنل ٹریننگ کے ادارے کے ذریعے بااختیار بنانے والے فلاحی ادارے ٹیف فاؤنڈیشن کی جانب سے کراچی کے مختلف پسماندہ علاقوں سے تعلق رکھنے والی خواتین کے باقاعدہ دوسرے گروپ کے لئے ساڑھے تین ماہ کی ٹریننگ کا آغاز کیا گیا ہے۔ سخت تربیت سے آراستہ اس کورس میں کھانے اور گھر کی دیکھ بھال سے متعلق کلاس روم اور عملی ٹریننگ شامل ہے، اس پروگرام کا مقصدزیر تربیت خواتین کو گھروں میں کام کے لئے بھرپور انداز سے پروفیشنل ڈومیسٹک ہیلپر زکے طور پر تیار کرنا ہے۔ 



ملک میں مخصوص مہارتوں کے ساتھ گھروں میں کام کرنے والی قابل اعتماد خواتین کی ضرورت پہلے سے زیادہ بڑھ گئی ہے۔ پاکستانی معاشرے میں بہتری کی جانب گامزن سماجی و معاشی صورتحال میں اس ضرورت کو پورا کرنے کے لئے فلپائن، سری لنکا اور بنگلہ دیش جیسے ملکوں سے گھریلو کام کے لئے خواتین کو بلانا پڑتا ہے۔ ٹیف۔ وی ٹی آئی (TAFF-VTI)اس پوری صورتحال کو بدلنے کے لئے کوشاں ہیں تاکہ پاکستان کی اپنی خواتین کو تربیت و مہارت کی فراہمی کے ذریعے ادارہ جاتی بنیادوں پر گھریلو کام کرنے والی ان خواتین کی مدد کی جائے جو اس شعبے میں اپنا کیریئر بنانا چاہتی ہوں۔ اس ضمن میں پیشہ ورانہ مہارتوں کی حامل مقامی خواتین کو نہ صرف روزگار کی فراہمی کی یقین دہانی کرائی جاتی ہے بلکہ معاشرے کے پسماندہ طبقے کی ان خواتین کے لئے روزگار کے بہترانداز سے آمدن کے بھی مواقع پیدا ہوں گے۔ 

ٹیف فاو ¿نڈیشن کی سی ای او عاتکہ لطیف نے بتایا، "ہمارا پروگرام تین سطحی ماڈل بھرتیاں، تربیت اور تعیناتیوں کے ذریعے خواتین کو منسلک کرتا ہے۔ اس لئے ہمارا مقصد صرف پیشہ ورانہ تربیت فراہم کرنا نہیں ہے بلکہ بہترین معاوضے کے ساتھ تربیت یافتہ خواتین کے لئے ملازمتوں کو بھی یقینی بناتا ہے۔ یہ پروگرام پاکستانی خواتین کو نہ صرف پیشہ ورانہ مہارت کا اہل بنانے کے لئے تیار کرتا ہے بلکہ انہیں قانونی و مالیاتی طور پر بطور خاتون اپنے حقوق سے متعلق آگہی کے ذریعے بھی بااختیار بناتا ہے۔ ہم نے ملاحظہ کیا ہے کہ ان اضافی خوبیوں کی بدولت ان خواتین کی زندگیوں پر بڑا فرق پڑا ہے۔"

اس سے قبل ٹیف۔وی ٹی آئی نے دو گروپ متعارف کرائے جن میں خواتین کے پہلے گروپ کو آزمائشی بنیادوں طور پر ٹریننگ فراہم کی گئی ۔ آزمائشی طور پر کامیابی کے بعد ووکیشنل ادارے نے مزید خواتین کی تربیت کے لئے پہلا باقاعدہ گروپ ترتیب دیا ۔ تربیت مکمل ہونے کے بعد دونوں گروپوں کی بیشتر تربیت یافتہ خواتین پہلے سے کہیں زیادہ بہتر جگہ ملازمت سے وابستہ ہوگئیں۔ ٹیف۔ وی ٹی آئی کی ٹریننگ سے قبل وہ 4 ہزار سے 8 ہزار روپے ماہانہ کے حساب سے کما رہی تھیں لیکن اب کنٹریکٹ ملازمت کے ساتھ ماہانہ 20 ہزار سے 30 ہزار روپے کما رہی ہیں اور یہ کنٹریکٹ بھی پاکستانی لیبر قوانین کی بنیاد پر قائم کئے گئے ہیں جس کا انتظام وی ٹی آئی کا کیرئیر پلیسمنٹ سینٹر کرتا ہے۔ 

ٹیف۔ وی ٹی آئی کے آزمائشی گروپ کی ٹرینی خاتون سلطانہ بتاتی ہیں ،"ٹیف۔ وی ٹی آئی سے ٹریننگ کے حصول کے بعد میں خود کو انتہائی خوش قسمت سمجھتی ہوں۔ یہ میری زندگی تبدیل کرنے والا تجربہ ہے اور صرف وہی یہ بات سمجھ سکتا ہے جو ہمشہ پسماندگی میں رہا ہوں اور اسکی پوری زندگی استحصال کا شکار رہے۔ میرے کام کی مہارت اور معیار میں بہت زیادہ بہتری آچکی ہے، میرا اعتماد بہت بڑھ گیا ہے اور نہ صرف میرے خاندان بلکہ میرے سسرال اور علاقے میں بھی میری عزت و احترام میں اضافہ ہوگیا ہے۔" 

اس پروجیکٹ کو آہستہ آہستہ اہمیت مل رہی ہے اور پاکستان بھر کے کاروباری اداروں اور تنظیموں نے ٹیف وی ٹی آئی کے اقدام کو ملک میں جامع سماجی ترقی کے زیادہ جدت انگیز منصوبوں میں سے ایک قرار دیا ہے۔ 


کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

تازہ ترین خبریں

Recent Posts Widget