18 ستمبر، 2017

آغا خان یونیورسٹی (اے کے یو) کے اشتراک سے ٹیف فاؤنڈیشن نے بزرگوں کی دیکھ بھال کا کورس متعارف کرا دیا

 


کراچی:  خواتین کی بااختیاری کے لئے کام کرنے والی ٹیف فاؤنڈیشن کے ادارے ووکیشنل ٹریننگ انسٹی ٹیوٹ (TAFF-VTI) نے آغا خان یونیورسٹی (اے کے یو) کے اشتراک سے بزرگوں کی بہتر دیکھ بھال سے متعلق اپنی نوعیت کا پہلا پروگرام شروع کرنے کا اعلان کیا ہے۔ اس ضمن میں اے کے یو کورس اور تربیتی مواد کی تیاری میں اہم کردار ادا کرے گا۔ یہ پروگرام اس بات کو یقینی بنائے گا کہ زیرتربیت تمام خواتین (ٹرینی ) میں مطلوبہ علم، مہارت اور برتاؤ کو یقینی بنایا جائے تاکہ وہ بزرگوں کی بہتر طور پر دیکھ بھال کرسکیں۔ اس پروگرام میں کام کے اصولوں اور طبی اخلاقیات کو بھی شامل کیا گیا ہے ۔ اس کے علاوہ اس پروگرام میں بزرگ افراد کو درپیش عام بیماریوں کی نشاندہی اور ان کی روزمرہ زندگی پر پڑنے والے اثرات کا جائزہ لیا جاتا ہے۔ 

ٹیف فاؤنڈیشن کی سی ای او عاتکہ لطیف نے بتایا، "آج ہمارے معاشرے میں بزرگوں کی دیکھ بھال کے لئے تربیت یافتہ افراد کی بہت ضرورت ہے۔ ہمارا یہ جدت انگیز پروگرام اپنے بزرگوں کے احترام پر مبنی ہے، ان کی دیکھ بھال ہماری اخلاقی ذمہ داری ہے اور اس ضمن میں خصوصی تربیت کے حصول کے بعد تربیت یافتہ خواتین بہتر انداز سے بزرگوں کی دیکھ بھال کرسکیں گی جس سے ان کی آمدنی میں بھی نمایاں اضافہ ہوگا۔ " 

بزرگوں کی دیکھ بھال کے اس کورس میں زیرتربیت خواتین کو دوران ملازمت ٹریننگ کے ذریعے عملی تربیت سے روشناس کرایا جائے گا ۔ اس پروگرام میں یہ اہم نکتہ ہے جس کے لئے ہولی فیملی اسپتال کے ساتھ اشتراک کیا گیا ہے، جو کراچی کے ایک انتہائی مستند اور بہترین اسپتالوں کی فہرست میں شامل ہے۔ یہ اسپتال تربیت کی خواہش مند خواتین کو پروگرام کے شروع ہونے سے قبل طبی معائنے کے لئے بھی تعاون فراہم کرے گا۔ 

اس پروگرام کے لئے کم از کم میٹرک تک تعلیم یافتہ 20 سے 45 سال کی 20 خواتین کو آزمائشی گروپ میں بھرتی کیا گیا ہے۔ اس تربیت میں بزرگوں کی عام بیماریوں سے متعلق شعبے کے ماہرین کی جانب سے فراہم کردہ بنیادی عام علامات سے آگہی شامل ہے۔ اس نصاب میں تربیت یافتہ خواتین کی قانونی بااختیاری، مالیاتی بااختیاری اور پروفیشنلزم و اخلاقیات جیسی مہارتوں سے متعلق ماڈیولز شامل ہیں۔ 

یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ پاکستان کی آبادی تیزی سے بڑھاپے کی جانب گامزن ہے اور 2025 تک ملک میں بزرگ افراد کی تعداد ساڑھے چار کروڑ تک پہنچ جائے گی۔ ابھی بھی 60 سال یا اس سے زائد عمر افراد کی تعداد ایک کروڑ 80 لاکھ تک پہنچ چکی ہے۔ پچھلی نسل یا اس سے پچھلے عرصے میں معمر افراد کی دیکھ بھال خاندان کے نوجوان کرتے تھے اور مشترکہ خاندانی نظام بڑے پیمانے پر رائج تھا۔ تاہم آج اکثر خاندانوں کے بچے مشترکہ خاندانی نظام سے باہر نکل آئے ہیں یا بیرون ملک چلے گئے ہیں اور ان کے پیچھے معمر آبادی کی دیکھ بھال کے شعبے میں خلاءپیدا ہوگیا ہے۔ روایتی طور پر معمر افراد تنہائی، تھکن، چلنے پھرنے میں معذوری، سانس پھولنے، بول و براز میں غیرتسلسل اور بصارت میں خرابی کے ساتھ ذیابیطس، جوڑوں اور ہائپر ٹینشن جیسے امراض کا شکار ہوتے ہیں۔ 

یف۔وی ٹی آئی میں خواتین کی بھرتی کا ایک شعبہ ہے جو مختلف گھرانوں میں معمر افراد کے لئے تربیت یافتہ خواتین کی تعیناتی کا ذمہ دار ہے۔ یہ شعبہ تربیت یافتہ خواتین ایک معاہدے کے تحت معمر افراد کے حقوق کا احترام کرتا ہے۔ معمر افراد کی دیکھ بھال کا یہ پروگرام نہ صرف کم آمدن کے حامل گھرانوں کی خواتین کو آمدن کے باعزت اور پائیدار مواقع فراہم کرتا ہے جو مہارتیں حاصل کرنے کی خواہاں ہیں بلکہ اس بڑھتے ہوئے معاشرتی مسئلہ کا قابل عمل حل بھی مہیا کرتا ہے۔ 


کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

تازہ ترین خبریں

Recent Posts Widget