اکتوبر 11, 2017

مولانا عبدالااکبر چترالی نے فندز اپنے اکاؤنٹ میں ٹرانسفر کرنے پر ایم این اے شہزادہ افتخار الدین کے خلا ف انکوائری کا مطالبہ کردیا

پشاور (نمائندہ ٹائمزآف چترال  10 اکتوبر 2017)  پشاور میں پریس کانفرنس  کرتے ہوئے رہنما جماعت اسلامی ، سابق ممبر قومی اسمبلی مولانا عبدالااکبر چترالی نے کہا  کہ  پاکستان کی تاریخ میں پہلی بار  کرپشن اور رشوت خوری کیا   انوکھی واردات کی گئی ہے۔  انہوں نے کہا  کہ ایم این اے چترال شہزادہ افتخار الدین نے اپنے صوابدیدی فنڈزکو ٹنڈرکئے بغیر محکمہ پاک پی ڈبلیو ڈی سے گٹھ جوڑ کرکے اپنے اکاؤنٹ میں جعلی طریقے منتقل کردیئے ہیں ، جسے وہ اپنے ملکیتی ہوٹل میں پارٹی کے لوگوں کو بطور رشوت  2 ماہ سے تقسیم کررہا ہے۔ جبکہ  اس فنڈ  کو پی ڈبلیو ڈی دستاویزا ت میں ٹیوب ویل، ہینڈ پمپس اور دیگر تعمیراتی و ترقیاتی کام کے طور پر درج کیا گیا ہے،   مزے کی بات تو یہ ہے کہ اس میں کسی گاؤں کا نام درج نہیں صرف یوسی کا ذکر ہے۔ 



انہوں نے کہا کہ ایم این اے  مذکورہ فند کی دو قسطیں ، 16 کروڑ رپے کی ایک اور 20 کروڑ روپے کی دوسری قسط ہے۔  جبکہ 20 کروڑ اروپے کی تیسری قسط بھی منظور ہوچکی ہے۔ کل ملا کر 56 کروڑ روپے بنتے ہیں۔    انہوں نے کہا کہ ایم این اے صاحب اب بھی کہتے ہیں کہ وفاقی حکومت فنڈز نہیں دے رہی ہے۔ 

مولانا نے قومی احتساب بیورو، اینٹی کرپشن اور صوبائی احتساب کمیشن سے مطالبہ کیا   کہ محکمہ  پی ڈبلیو ڈی سے تما دستاویزات حاصل کرکے ایم این اے کے خلاف  فوری کاروائی عمل میں لائی جائے۔ عوام کو بتایا جائے کہ فنڈ کی رقم سے کس کس کو نوازا گیا ہے۔  اور فنڈ سے ترقیاتی کام کتنے کئے گئے۔  قومی خزانے کو کتنا نقصان پہنچایا گیا ہے۔ کی فنڈز تقسیم کرنے کا یہ طریقہ جائز ہے یا قانون اس کی اجازت دیتا ہے ۔ اس میں ملوث محکمہ پی ڈبلیو ڈی کے اہلکاروں کے خلاف بلا تاخیر کاروائی کی جائے۔ جو اس بڑ ے کرپشن میں معاون ہیں۔


کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

تازہ ترین خبریں

Recent Posts Widget