24 اکتوبر، 2017

اےٹی ایم فراڈز کے نت نئے طریقے : اے ٹیم ایم کارڈ استعمال کرنے والے اس خبر کو ضرور پڑھیں

 

کراچی (ابوالحسنین: ٹائمز آف چترال) پلاسٹک منی، موبائل منی یا برانچ لیس بینک وغیرہ عام ہوگئیں ہیں۔ چیک بک کا استعمال اب پرانے وقتوں کی بات لگتی ہے۔ ما سوائے بڑی کمپنیوں اور اداروں یا کاروباری افراد کے عام صارفین چیک بک کا استعمال شاز و نادر ہی کرتے ہیں۔ اے ٹی ایم کارڈ جہاں زندگی آسان بنایا ہوا ہے وہاں خطرے سے بھی خالی نہیں ہے۔ 

دور حاضر میں بغیر محنت کے پیسے کمانا کسے برا لگتا ہے۔ نوسر بازوں نے ایسے ایجادات کئے ہیں کہ لٹنے والا دنگ رہ جاتا ہے کہ یہ میرے ساتھ ہوا کیا۔ ایسے ہی ایک گروہ کا پتہ چلا ہے جو ایک میگنیٹک سٹرپ کے ذریعے آپ کا اے ٹی ایم ڈیٹا چرا لیتا ہے۔ اور آپ کے اکاؤنٹ پر ہاتھ صاف کرتا ہے۔ میگنیٹک سٹرپ  ایک چھوٹے سے کیمرے کا حامل سکیننگ ڈیوائس ہے۔ ایسے ہی ایک ڈیوائس اسلام آباد میں ایک اے ٹی مشین میں نصب شدہ پکڑی بھی گئی ہے۔ 

اس ڈیوائس کو جرائم پیشہ افراد یا ہیکرز اس خانے میں چپکا دیتے ہیں جس میں کارڈ ڈالا جاتا ہے جہاں یہ کارڈ کا نمبر اور کارڈ پر موجود کوڈ کو اپنی میموری میں سٹور کرلیتا ہے۔ یہ لوگ چھوٹا سا کیمر مشین کے کی بورڈ کے اوپر چپکا دیتے ہیں جیسے ہی صارف پن کوڈ ڈالنے لگتا ہے کیمرا اس کی ویڈیو بناتا ہے۔ اسی طرح صارف کے کارڈ کا نمبر اور کوڈ اور پن کوڈ ہیکرز کے پاس چلا جاتاہے اب یہ جیسے چاہیں اسے استعمال کرسکتے ہیں۔ چاہیں آ کے اکاؤنٹ سے کیش رقم نکال لیں یا  آپ کے کارڈ سے پرچیزنگ کریں۔ آپ کو پتہ اس وقت چل جاتا ہے جب آپ اکاؤنٹ چیک کر رہے ہوتے ہیں۔

لہذا کارڈ استعمال کرنے والے اپنے کارڈ پر ایس ایم ایس الرٹ لگوادیں تاکہ جیسے ہی آپ کا کارڈ استعمال ہو آپ کو ایک مسیج آجائے گا۔ کہ فلاں وقت میں آپ کا اے ٹی ایم استعمال ہوا۔

فوٹو: ٹائمز آف کراچی


کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

تازہ ترین خبریں

Recent Posts Widget