25 اکتوبر، 2017

میٹرک پاس جعلی ڈاکٹر تین ماہ تک حیات آباد میڈیکل کمپلیکس انتظایہ کو ماموں بناتا رہا، پکڑا گیا

 

پشاور(ٹائمز آف چترال ویب ڈیسک)  قدرت اللہ نامی شخص جعلی ڈاکٹر بن کر پشاور کے حیاک آباد میڈیکل کمپلیکس انتظامیہ کو تین ماہ تک ماموں بناتا رہا۔ ملزن ہسپتال کے مختلف وارڈز میں مریضوں کا باقاعدہ معائندہ کرتا رہا ہے۔ جسے گزشتہ دنوں گرفتار کر کے مجسٹریٹ کے سامنے پیش کیا گیا۔

جوڈیشل مجسٹریٹ پشاور جاوید آفتاب نے حیات آباد کمپلیکس میں تین ماہ ڈیوٹی دینے کے الزام میں گرفتار جعلی ڈاکٹر قدرت اللہ کو تفتیش مکمل ہونے کے بعد 14دن کی جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیج دیا ہے جبکہ ملزم نے عدالت میں ضمانت کے لیے درخواست بھی دائر کردی ہے۔

گزشتہ روز جب پولیس ملزم قدرت اللہ سکنہ بنوں کو ایک روزہ جسمانی ریمانڈ کرنے کے بعد عدالت میں پیش کیا تو اس دوران عدالت کو بتایا گیا کہ ملزم پر الزام ہے اس نے 3 ماہ تک حیات آباد میڈیکل کمپلیکس ہسپتال کی مختلف وارڈوں میں مریضوں کامعائنہ کرتارہا ۔ جس کے خلاف مدعی ڈاکٹر نور محمد نے ایف آئی آر درج کی ہے ، جبکہ ملزم کا اپنا ایک پرائیویٹ ہسپتال بھی ہے ملزم سے پوچھ گچھ مکمل کرلی گئی ہے لہذااسے جیل بھجوایاجائے فاضل جج نے سماعت کے بعد ملزم کو جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیج دیا اس دوران ملزم کے وکیل نے عدالت میں ضمانت پررہائی کی درخواست بھی دائرکی ۔

کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

تازہ ترین خبریں

Recent Posts Widget