19 دسمبر، 2017

بھارت پاکستان پر آبی دہشت گردی کررہا ہے، ملکی آبی ذخائر ختم ہورہے ہیں، کالاباغ ڈیم پر اختلافات ختم ہونے چاہئیں: ڈاکٹر مرتضیٰ مغل

 

اسلام آباد (نیوز ڈیسک)  پاکستان اکانومی واچ کے صدر ڈاکٹر مرتضیٰ مغل نے کہا ہے ملک نہ صرف بھارت کی جانب سے سنگین آبی دہشت گردی کا شکار ہے بلکہ ملک کے اندر بھی پانی کے وسائل تیزی سے ختم ہو رہے ہیں۔دریا پہلے ہی خشک ہو رہے ہیں جس سے زیر زمین پانی پر انحصار ضرورت سے زیادہ بڑھ گیا ہے اور اگر طلب اور رسد کے مابین فرق اسی طرح بڑھتا رہا توپاکستان جلد ریگستان بن جائے گا۔حکومت کی تمام تر توجہ کرپشن کے مقدمات، قرضے لینے ،بجلی گھر بنانے اور آنے والے الیکشن پر مرکوز ہے جبکہ پانی کے اہم شعبہ کو مسلسل نظر انداز کیا جا رہا ہے۔ 


ڈاکٹر مرتضیٰ مغل نے یہاں جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا کہ سیاستدان ملکی مفاد میں کالا باغ ڈیم اور دیگر میگا پراجیکٹس پر اختلافات ختم کریںاور پانی کوملکی سا لمیت کا مسئلہ قرار دیا جائے۔موسمیاتی تبدیلیوں، گلئیشیرز کے پگھلنے، ٹمبر مافیا، اور بھارت ہمارے دریاﺅں کا صفایا کر رہے ہےں۔دریاﺅں میں پانی کی کمی سے ملک کے مختلف علاقوں میںزیر زمین پانی کی سطح سالانہ چار انچ سے ایک فٹ تک مسلسل کم ہو رہی ہے جبکہ بعض علاقوں میںسالانہ کمی تین سے چار فٹ تک ریکارڈ کی گئی ہے۔پانی کی سطح گرنے سے ٹیوب ویل چلانے کے اخراجات میں ہزاروں روپے ماہانہ کا اضافہ ہورہا ہے۔ گرتے واٹر ٹیبل سے ر سونا اگلتی زمینیں صحرا بن کربے روزگاری اور فوڈ سیکوریٹی کے مسئلہ کو شدید کردینگی جبکہ زراعت پر دارو مدار رکھنے والی صنعتیں بھی تباہ ہو جائیںگی ۔ پڑوسی ملک کو پانی کی چوری سے باز رکھنے،کاشتکاروں کو کم پانی سے زیادہ فصل اگانے کی تربیت، اسٹوریج کی صلاحیت بڑھانے ،کم پانی سے بہتر نتائج دینے والے بیج متعارف کروانے اور سیلاب کا پانی ذخیرہ کرکے اسے زمین میں جزب کرکے واٹر ٹیبل اونچا کرنے سے صورتحال بہتر ہو سکتی ہے۔


کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

تازہ ترین خبریں