22 جنوری، 2018

ایمریٹس ایئرلائن نے ایئربس کو 16 ارب ڈالر مالیت کے 36 اے 380 طیاروں کا آرڈر دے دیا

 

ایمریٹس نے 16 ارب ڈالر کی مالیت کے 36 عدد A380 طیاروں کا آرڈر دیا ہے۔ اس ضمن میں ایمریٹس ایئرلائن اینڈ گروپ کے چیئرمین اینڈ چیف ایگزیکٹو عزت مآب شیخ احمد بن سعید المختوم نے دبئی میں ایمریٹس کے ہیڈکوارٹرز میں ایئربس کمرشل ایئرکرافٹ کے چیف آپریٹنگ آفیسر کسٹمرز جان لیاہی کے ہمراہ معاہدے پر دستخط کئے ہیں۔


دبئی: دنیا کی سب سے بڑی ایئرلائن ایمریٹس نے 16 ارب ڈالر مالیت کے 36 عدد A380 طیاروں کی خریداری کا معاہدہ کیا ہے۔ ان میں سے 20 طیاروں کا آرڈر مستحکم ہے جبکہ 16 طیاروں کے حصول کا آپشن ہے۔ ایمریٹس کے A380 طیارے جی ای اور رولز رائس انجن سے چلتے ہیں اور ایئرلائن اپنے جدید ترین اے 380 طیاروں کے لئے انجن آپشنز کا جائزہ لے رہی ہے۔ 

ایمریٹس کو ان اضافی طیاروں کی فراہمی کا آغاز سال 2020 سے ہوگا۔ ایمریٹس کے فضائی بیڑے میں ایئربس اے 380 طیاروں کی تعداد 101 ہوگئی ہے اور ابھی مزید 41 طیارے ملنے ہیں۔ ان نئے طیاروں کے حصول کے ساتھ ایمریٹس کے اے 380 طیاروں کی تعداد 60 ارب ڈالر کی لاگت سے 178 تک پہنچ جائے گی۔ 

متحدہ عرب امارات کے نائب صدر، وزیراعظم اور دبئی کے حاکم عزت مآب شیخ محمد بن راشد المختوم نے کہا، "ایمریٹس دبئی کی ترقی، جدت اور مزاحمت کی روح کی حقیقی طور پر ترجمانی کرتا ہے۔ یہ شہر لوگوں، دارالحکومت اور معلوماتی بہاﺅ کے ساتھ دنیا کو ملانے کے بڑھتے ہوئے کے کردار کی شاندار مثال بھی ہے۔ اس معاہدہ سے مستقبل کی تشکیل میں ایمریٹس کے اعتماد کی عکاسی ہوتی ہے اور اسکے عزم کا اظہار ہوتا ہے کہ عالمی سطح کے مقام اور ہوا بازی کے مرکز کے طور پر دبئی کی حیثیت مزید مستحکم ہو۔" 

ایمریٹس ایئرلائن اور گروپ کے چیئرمین اور چیف ایگزیکٹو عزت مآب شیخ احمد بن سعید المختوم نے اس مفاہمتی یاد داشت پر دستخط کئے جن کے ہمراہ ایئربس کے کمرشل ایئرکرافٹ چیف آپریٹنگ آفیسر کسٹمرز جان لیاہی بھی موجود تھے۔ اس معاہدے پر دستخط دبئی میں ایمریٹس کے ہیڈکوارٹرز میں کئے گئے۔ 

شیخ احمد بن سعید المختوم نے کہا، "ہم نے اس حقیقت کو کبھی راز نہ رکھا کہ اے 380 طیارے ایمریٹس کے لئے کامیاب رہے ہیں۔ ہمارے صارفین اسے پسند کرتے ہیں اور ہم اپنے نیٹ ورک کے مختلف مشنز پر اسے تعینات کرنے کے قابل ہوگئے ہیں جس سے ہمیں وسعت اور مختلف مزاج کے مسافروں سے متعلق بھرپور سہولت فراہم ہوتی ہے۔" 

انہوں نے مزید کہا، 
"اے 380 طیاروں کے اس نئے آرڈر میں بعض طیارے پرانے جہازوں کی جگہ لیں گے۔ اس آرڈر سے اسکی پروڈکشن لائن میں استحکام حاصل ہوگا۔ ہم ایئربس کے ساتھ بھرپور طور پر کام جاری رکھیں گے تاکہ طیارے اور اس میں دوران سفر سہولیات میں اضافہ لایا جائے، یوں ہم اپنے مسافروں کو ممکنہ طور پر بہترین سفر کی سہولت پیش کرسکیں گے۔ اس جہاز کی خوبصورتی یہ ہے کہ جہاز میں ٹیکنالوجی اور رئیل اسٹیٹ سے ہمیں کافی جگہ ملتی ہے تاکہ ہم جہاز کے انٹیرئیر میں کچھ مختلف چیزیں کرسکیں۔" 

ایئربس کمرشل ایئرکرافٹ کے چیف آپریٹنگ آفیسر کسٹمرز جان لیاہی نے کہا، 
"میں اے 380 طیاروں کے لئے مسلسل تعاون پر ایمریٹس، شیخ احمد، ٹم کلارک اور عادل الرضا کا شکریہ ادا کرنا چاہوں گا۔ اس جہاز نے سال 2008 سے ایمریٹس کی ترقی اور کامیابی میں بھرپور انداز سے کام کیا ہے اور ہم خوش ہیں کہ وہ مستقبل میں بھی یہ سفر جاری رکھے گا۔ اس نئے آرڈر سے ایئربس کا یہ عزم سامنے آتا ہے کہ اے 380 طیاروں کی تیاری کم از کم اگلے 10 سال تک جاری رہے گی۔ میں ذاتی طور پر مطمئن ہوں کہ ایمریٹس کی مثال سے مزید آرڈر آئیں گے اور 2030 کی دہائی تک یہ شاندار جہاز مزید بہتر انداز سے تعمیر ہوں گے۔" 

ایمریٹس کی ایئربس کے ساتھ شراکت داری دہائیوں پر مبنی ہے۔ ایمریٹس دنیا میں اے 380 طیارے آپریٹ کرنے والی سب سے بڑی ایئرلائن ہے۔ 




کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

تازہ ترین خبریں