12 مارچ، 2018

لاوی ہائیڈرو پاور پرو جیکٹ کا ملبہ سیلابی نالے میں ڈالا جا رہا ہے، 300 سے زائد آبادی خطرے میں، حکام توجہ فرمائیں

 

لاوی ہائیڈرو پاور پرو جیکٹ کا ملبہ سیلابی نالے میں ڈالا جا رہا ہے، 300 سے زائد آبادی خطرے میں، حکام توجہ فرمائیں


لاوی ھائیڈو پاور پراجیکٹ 

ضلعی ناظم حاجی مغفرت شاہ صاحب MNA شھزادہ افتخار الدین صاحب، MPA سیلم خان صاحب, اMPA  فوزیہ بی بی صاحبہ،  ہھم اہلیان  گاؤں شیشی، و ڈبلیک آپ سب کی توجہ   ایک بہت بڑے عوامی مسئلے کی طرف مبذول کرانا چاہیں گے، لاوی ھائیڈو پاور پروجیکٹ میں  لاوی سے لیکر بیرگانسار شیشی کوہ تک بنے والے ھائیڈو پاورٹنل  کا سارا ملبہ لاوی گول  کے سیلابی نالے میں ڈالا جارہا ہھے اور اب اگر بارش ھوگئی تو  شیشی، ڈابلیک گاؤں کے 300 سے زائد گھرانوں کی زندگی خطرے میں پڑ سکتی ہے  اور کنٹریکٹرز سے پتہ چلا ہھے کہ یہ T ٹائپ ٹنل ہے اور تینوں سائیڈ کا ملبہ  لاوی گول کے سیلابی نالے میں ڈال دیا جائے گا، یہ سننے کے بعد  اس نالے کے کنارے آباد ان دو گاؤں کے لوگوں میں شدید بے چینی اور پریشانی کا شکار ہوگئے ہیں، لوگ سوچ میں پڑگئے ہیں  کہ اس سیلابی نالے کے قریب بسنے والے گاؤں کے میکنوں کا  کیا ھوگا , کیوں کے یہ ملبہ کل سیلاب کی صورت میں پورے کے پورے شیشی اور ڈبلیک کو بہا کر لے جائے گا۔ تو یہ لوگ کہاں جائیں گے، حالانکہ ملبہ ڈالنے کے لیے پورا لاوی ڈاپ کا  ویران بے آب و گیاہ میدان پڑا ھوا ہھے ، لیکن یہ لوگ بضد ہیں کہ نہیں ملبے کو اس سیلابی نالے میں ہی ڈالیں گے اور  300 سے زائد گھرانوں کو گھروں سے محروم کریں گے۔ نہ حکومت نے ان لوگوں  کو پیسے دیے ہیں اور نہ ان کی کوئی ذمہ داری لی ہے... 

میں سوشل میڈیا کے توسط سے اس بات سے اپنے مقامی نمائندوں کے وزیر اعظم پاکستان،  جناب شاھد خاقان عباسی صاحب  وفاقی وزیر پاور انیڈ انرجی، CM KPK جناب پرویز خٹک صاحب، صوبائی وزیر بجلی و توانائی، DCO چترال  اپیل کرتے ہیں کہ فوری ایکشن لیکر  دو گاؤں کے 300 سے زائد گھرانوں کو بے گھر ھونے سے بچائیں اور کنٹریکٹرز اور PEDO کو ملبہ سیلابی نالے کے بجائے قریبی  میدان لاوی ڈاپ میں ڈلوانے کا پابند بنائے.... اگر ہمارے مطالبات پر توجہ نہ دی گئی تو عوامی احتجاج کی صورت میں کام روک دیا جائے گا...... منجانب عوام گاؤں شیشی، گاؤں ڈابلیک.....

مراسلہ محمد الطاف بروشو




کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

تازہ ترین خبریں