1 مئی، 2018

ممبرصوبائی اسمبلی سید سردارحسین کا فیس بک اکاؤنٹ جعلی ہونے کا انکشاف، ایم پی اے فیس بک سے نا آشنا




چترال (نمائندہ ٹائمزآف چترال) سوشل میڈیا آج کے دور میں بہت اہمیت کا حامل ہوچکا ہے۔ کمپیوٹرز اور ٹیبلیٹس کےبعد سمارٹ فون کے آنے سے سوشل نیٹ ورکنگ آسان ہوگیا ہے۔ فیس بک، ٹوئٹر، لنکڈ اِن، انٹساگرام سوشال میڈیا ویب سائیٹس میں سب سے زیادہ استعمال ہونے والے پلیٹ فارمز ہیں۔

جہاں شوبز کی مشہور شخصیات کے نام پر فیس کے جعلی اکاؤنٹس بنائے جاتے ہیں وہاں ان پلیٹ فارمز سے نا آشنا سیاستدانوں کے نام پر بھی اکاؤنٹ کھولے جاتے ہیں۔ جس کا مقصد اکاؤنٹ یا پیج کو جلد مقبول بنانا بھی ہوتا ہے تاہم اس کےغلط استعمال کا بھی اندیشہ ہے جس سے متاثرہ شخص کسی بڑی مصیبت میں بھی پڑ سکتا ہے اور خواہ مخواہ سائبر کرائم کا دفعہ لگ سکتا ہے۔

ممبرصوبائی اسمبلی اپر چترال سیدسردارحسین شاہ کے نام سے بھی دو اکاونٹس بڑے ایکٹیو ہیں۔ ایک اکاؤنٹ mpapk90 بنام سردار حسین 14 اور 15 اپریل کو باقاعدگی سے پروفائل پکچر بھی اپڈیٹ کردی ہے۔ جس کے 4 ہزار سے اوپر فرینڈز جبکہ 254 میچوئل فرینڈز ہیں۔ جبکہ دوسری پروفائل profile.php یوسر آئی ڈی اور Sardar Hussain کے نام سے ہے جو آخری دفعہ 2014 میں اپڈیٹ ہوئی ہے۔ باقی جن لوگوں نے انہیں حقیقی سردار حسین سمجھ کر اپنے پوسٹیں  ٹیگ کیے ہوئے ہیں وہ ان کی پروفائل کی وال پر آچکے ہیں۔ اس پروفائل کے ساتھ 2371 فرینڈز جبکہ 229 میچوئل فرینڈز ہیں۔ ان دونوں فیس اکاؤنٹس کے بارے میں موصوف کا کہنا ہے کہ وہ فیس بک استعمال ہی نہیں کرتے تو اکاؤنٹس کہاں سے آگئے۔


ان جعلی اکاؤنٹس کے بارے میں ایک اخباری بیان میں  سردار حسین کا کہنا کہ انہیں ان اکاؤنٹس کے بارے میں علم ہی نہیں ہے۔ میرااپنا کوئی فیس بک اکاؤنٹ نہیں ہے کوئی میرے نام سے جعلی فیس بک اکاؤنٹس بناکرچلارہاہے جن سے میراکوئی تعلق نہیں ہے ۔ 

فیک آئی ڈی بنانے والوں کے خلاف متعلقہ اداروں کودرخواست دی ہے۔ اُن کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔ اس لئے سوشل میڈیا کے تمام احباب اور دوستوں کوبروقت اطلاع دی جاتی ہے کہ نا معلوم افراد میرے نام سے منسوب فیک اکاؤنٹس بناکرمجھے بلیک میل کرنے کی کوشش کررہے ہیں اس لئے میرے نام پرجتنے بھی اکاؤنٹس ہیں اُ ن سے میراکوئی تعلق نہیں ہے ۔ اور کسی بھی غیر شائستہ ، غیر اخلاقی اور غیر اسلامی پوسٹ کو مجھ سے منسوب نہ کیا جائے ۔ انشاء اللہ جلد اس قسم کے مذموم حرکت کرنے والے فرد کو گرفت میں لایا جائے گا ۔ اور سائبر کرائم ایکٹ کے تحت اُسے سزا دلوایا جائے گا ۔




کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

تازہ ترین خبریں