اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

6 جون، 2018

معطل ڈرائیور کاشف الدین کے الزامات اورڈی سی آفس سے وضاحتی پریس ریلیز

 

چترال (نیوز ڈیسک) ڈپٹی کمشنر چترال ارشاد سدھیر کے دفتر سے جاری ایک پریس ریلز میں‌کہا گیا ہے کہ ڈرائیور مسمی کاشف الدین ولد بشیر الدین سکنہ جغور ضلع چترال کو آج سے تین مہنیے پہلے ڈرائیور کی خالی اسامی پر بھرتی کیا گیا تھا اور وہ ایک سال کی پروبیشن پرتھا۔



اور درجہ ذیل وجوہات کی بنا پر مذکورہ ڈرائیور کو ملازمت سے برخواست کیا گیا:-

۱۔ یہ کہ مذکورہ ڈرائیور افسران بالا کی موجودگی میں بھی گاڑی انتہائ تیز رفتاری سے چلاتا تھا۔ جس پر اس کی کئ دفعہ سرزنش بھی کئ گئ۔
۲۔ یہ کہ مذکورہ ڈرائیور اپنے آزمائش / امتحان جس کو Probationکہتے ہیں اور جس کی میعاد ایک سال ہوتی ہے کے دوران اس نے تین مرتبہ سرکاری گاڑی کا ایکسیڈنٹ کیا۔
۳۔ محکمانہ انکوائری کے دوران مزکورہ ڈرائیور نے انکوائری افسر اور دیگر افراد کے سامنے بزات خود ایکسیڈنٹ کرنے کا اعتراف کیا ۔
4۔ دوران انکوائری اس بات کا بھی انکشاف ہوا کہ مزکورہ ڈرائیور منشیات کا عادی ہے ۔
۴۔ ایک نشے کے عادی شخص کو ڈرائیور کی اسامی پر رکھنا لوگوں کی زنگی سے کھیلنے کے مترادف ہے۔
۵۔ چونکہ انکوائری رپورٹ اس کے خلاف جاتی تھی اور کمیٹی کے تجویز پر اس کو ملازمت سے فارغ کیا گیا۔
۶۔ مذکورہ ڈرائیور کی بدنیتی کا ثبوت یہ ہے کہ اس نے اپیل کا حق ہونے کے باوجود اعلی حکام کو اپیل کرنے کے بجائے پریس کانفرنس کی۔
۷۔ یہ بات انتہائ اہم ہے کہ مذکورہ ڈرائیور کے والد پر سرکاری گاڑیوں کی مرمت میں فنڈز کی خرد برد پر پہلے سے ہی انکوائری چل رہی ہے ۔



کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

نوٹ: ٹائمزآف چترال کی انتظامیہ اور اداراتی پالیسی کا بلاگر کے خیالات سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔ اگر آپ بھی چاہتے ہیں کہ آپ کا نقطہ نظر پاکستان اور دنیا بھر کے ناظرین تک پہنچے توآپ بھی قلم اٹھائیے اور 400 سے 700 الفاظ پر مشتمل اپنی تحریر تصویر، مکمل نام، فون نمبر، سوشل میڈیا آئی ڈیز اور اپنے مختصر مگر جامع تعار ف کے ساتھ ہمیں ای میل کریں ای میل ایڈریس timesofchitral@outlook.com آپ اپنے بلاگ کے ساتھ تصاویر اور ویڈیو لنک بھی بھیج سکتے ہیں۔

اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

loading...

تازہ ترین خبریں