اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

28 اگست، 2018

چترال میں ایک اور لڑکی نے خودکشی کرتے ہوئے زندگی کا حاتمہ کرلی، لڑکی کی عمر 23 سال اور غیر شادہ شدہ بتائی جاتی ہے۔

چترال میں ایک اور لڑکی نے خودکشی کرتے ہوئے زندگی کا حاتمہ کرلی، لڑکی کی عمر 23 سال اور غیر شادہ شدہ بتائی جاتی ہے۔

چترال (گل حماد فاروقی) چترال ٹاؤن میں ایک اور لڑکی نے گلے میں پھندا ڈال کر خودکشی کرلی۔ خودکشی کی فوری وجہ تاحال معلوم نہ ہوسکی۔ چترال پولیس کے مطابق ہون فیض آباد کے رہایشی سفینہ بی بی دختر شیرین خان نے گلے میں
اپنے گھر میں پنکھے کے ساتھ پھندا ڈال کر خودکشی کرلی۔ چترال پولیس نے زیر دفعہ 176 ضابطہ فوجداری تفتیش شروع کردی اور تحقیقات مکمل ہونے پرمقدمہ درج کی جائے گی۔



سفینہ بی بی کی لاش کو پوسٹ مارٹم کرنے کیلئے ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹرز ہسپتال چترال لایا گیا جو ضروری کاروائی کرنے کے بعد لاش کو ورثا ء کے حوالہ کیا گیا۔ آزاد ذرائع کے مطابق پچھلے تین ماہ میں خودکشیوں کا یہ بیسواں (20) واں واقعہ ہے جس میں اکثر نوجوان لڑکیاں ہی خودکشی کرتی ہیں۔

اس مہینے کے پہلے ہفتے میں پانچ طلباء طالبات نے اس وقت خودکشی کی تھی جب ان کے انٹر میڈییٹ کے امتحان میں نمبر کم آئے تھے۔  چترال کے خواتین میں خودکشیوں کی بڑھتی ہوئی رحجان کو کم کرنے کیلئے تاحال حکومتی یا غیر سرکاری ادارے نے کوئی حاص قدم نہیں اٹھایا ہے تاہم سابق ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر منصور امان نے خواتین کیلئے تھانہ چترال میں ایک
زنانہ رپورٹنگ سنٹر کھولا تھا جس میں زنانہ پولیس ڈیوٹی کررہی ہیں۔

واضح رہے کہ پورے چترال میں کسی بھی ہسپتال میں کوئی سائکاٹرسٹ، ماہر نفسیات اور دماغی امراض کا کوئی ڈاکٹر موجود نہیں ہے۔ اور نہ ہی چترال میں خواتین کیلئے کوئی دارلامان یعنی شلٹر ہاؤ س نہیں ہے جہاں وہ پناہ لے
سکے۔ چترال کے نوجوان طبقے اور با الحصوص خواتین میں تشویش ناک حد تک بڑھتی ہوئی رحجان پر والدین نہایت پریشان ہیں اور عوام مطالبہ کرتے ہیں کہ اس کی تحقیقات کیلئے ماہرین کا ٹیم بھیجا جائے تاکہ اس کا اصل وجہ معلوم
کرکے اس کی روک تھام ہوسکے۔



کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

نوٹ: ٹائمزآف چترال کی انتظامیہ اور اداراتی پالیسی کا بلاگر کے خیالات سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔ اگر آپ بھی چاہتے ہیں کہ آپ کا نقطہ نظر پاکستان اور دنیا بھر کے ناظرین تک پہنچے توآپ بھی قلم اٹھائیے اور 400 سے 700 الفاظ پر مشتمل اپنی تحریر تصویر، مکمل نام، فون نمبر، سوشل میڈیا آئی ڈیز اور اپنے مختصر مگر جامع تعار ف کے ساتھ ہمیں ای میل کریں ای میل ایڈریس timesofchitral@outlook.com آپ اپنے بلاگ کے ساتھ تصاویر اور ویڈیو لنک بھی بھیج سکتے ہیں۔

اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

loading...

تازہ ترین خبریں