24 اگست، 2018

ہزاروں سال بعد مسلمانوں کا عید اور کیلاش قبیلے کا اوچال تہوار ایک ہی دن میں آگئے، کیلاش کے لوگ تین تہوار ساتھ مناتے ہیں

وادی کیلاش کے لوگ تین خوشیاں اکٹھے منا رہے ہیں۔

چترال (گل حماد فاروقی) وادی کیلاش میں جشن کا سماء ہے مسلمان عیدا لاضحی منارہے ہیں، کیلاش قبیلے کے لوگ اپنا سالانہ تہوار اوچھال منا رہے ہیں اور رمبور کے لوگ اقلیتی رکن صوبائی اسمبلی وزیر زادہ کے انتحاب کی خوشی منارہے ہیں۔ کیلاش قبیلے کے لوگ اپنا سالانہ تہوار اوچھال منارہے ہیں جو گندم کی پکنے کے بعد کٹائی کے وقت ہوتا ہے ۔ یہ رسم ماضی میں گندم کے فصل پکنے کے بعد کٹائی کے وقت منایا جارہا تھا کیونکہ اس زمانے میں لوگ بھوک و فاقوں سے دوچار ہوتے تھے اور کیلاش لوگ گندم کا فصل پکنے کے بعد اس خوشی میں جشن مناتے تھے یہ رسم ہزاروں سالوں سے چلتا آرہا ہے مگر کیلاش کے بزرگوں کا کہنا ہے کہ صدیوں بعد ایک ہی دن میں یہ تہوار آیا یعنی مسلمانوں کا عید اور کیلاشوں کا اوچھال ایک ہی وقت میں منایا جارہا ہے۔



اس جشن میں کیلاش خواتین نئے کپڑے پہن کر سروں پر پرندے کا رنگین پر لگاتی ہیں اور ٹولیوں کی شکل میں رقص پیش کرتی ہیں۔ کیلاش قبیلے سے تعلق رکھنے والے نو منتحب رکن صوبائی اسمبلی وزیر زادہ نے اس جشن میں حصوصی طور پر شرکت کی ۔ اس رنگا رنگ جشن کو دیکھنے کیلئے پہلی بار بہت بڑی تعداد میں غیر ملکی سیاح بھی وادی کیلاش آئے تھے۔ رکن صوبائی اسمبلی وزیر زادہ نے تمام غیر ملکی سیاحوں کو خوش آمدید کہا اور ان کا شکریہ ادا کیا کہ وہ ان کے اس تہوار کو دیکھنے کیلئے دنیا بھر سے آئے ہیں۔ 

ہمارے نمائندے سے باتیں کرتے ہوئے اطالوی خاتون نے کہا کہ وہ پہلی بار اٹلی سے اس تہوار کو دیکھنے آئی ہے۔ 

فلپائن سے آئے ہوئے سیاحوں نے بتایا کہ وہ اس تہوار سے بہت محظوظ ہوئے ایک تو یہاں کا ماحول نہایت پر امن ہے اور دوسری بات یہ کہ لوگ انتہائی مہذب اور مہمان نواز ہیں۔ 

ایک جرمن خاتون نے بھی اس جشن کو نہایت سراہا جو پہلی بار یہاں آئی ہے اور بار بار آنے کو دل کرتا ہے۔

کراچی سے آئی ہوئی سبین شاہ اپنے اہل حانہ کے ساتھ کیلاش آئی ہوئی ہے ان کا کہنا ہے کہ اس جشن کو دیکھ کر وہ حیران رہ گئی کیونکہ اس نے سنا تھا مگر دیکھا نہیں تھا ہمارے ملک میں اس قسم کے جشن بھی منائے جارہے ہیں۔او ر وہ اگلی بار اپنے پورے حاندان کو لیکر کیلاش آئے گی۔

رضیہ ایک کیلاش لڑکی ہے اس نے اس بات پر خوشی کا اظہار کی کہ ان کے کمیونٹی کا فرد وزیر زادہ پہلی بار رکن صوبائی اسمبلی بن چکا ہے اور انہوں نے عمران خان کا شکریہ اداکرنے کے ساتھ ساتھ مطالبہ کیا کہ وزیر زادہ کو وزارت بھی دی جائے تاکہ ہمارے مسائل حل ہوسکے۔

فرینہ کیلاش بھی بہت خوش ہے عید اور اوچھال ایک ہی وقت میں منانے کا مزہ کچھ اور ہے اور ساتھ ہی ان کا ایم پی اے بھی حلف لینے کے بعد پہلی بار کیلاش وادی میں آیا ہے جس نے ان کی خوشیوں کو دوبالا کیا ہوا ہے۔

ڈاکٹر محمد عدنان بھٹہ جو بیرون ملک مقیم ہے مگر اس جشن کو دیکھنے کیلئے حصوصی طور پر اپنے فیملی کے ساتھ کیلاش آیا ہوا ہے اور وہ اس بات پر بھی خوش ہے کہ پاکستان میں پہلی بار تبدیلی آئی ہے اور عمران خان کے وزیر اعظم منتحب ہونے کے بعد اب یہ ملک ترقی کے راہ پر گامزن ہوگا۔ 

نو منتحب رکن صوبائی اسمبلی وزیر زادہ نے کہا کہ یہاں کے لوگ بہت خوش ہیں مسلم اور کیلاش بھای اپنا اپنا تہوار منا رہے ہیں اور خلف برداری کے بعد میں پہلی بار یہاں آیا ہوں لوگ میرے خلف برداری پر بھی خوش ہیں اور دنیا بھر سے کثیر تعداد میں غیر ملکی سیاح پہلی بار اس جشن کو دیکھنے آئے ہوئے ہیں یہ ہے نیا پاکستان جو پہلی بار اتنی کثیر تعداد میں غیر ملکی سیاح چترال آئے ہیں جو یقینی طور پر ملکی کی ترقی میں مثبت کردار ادا کرے گا۔ 



کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

تازہ ترین خبریں