3 ستمبر، 2018

امریکہ خود دہشت گرد ملک ہے، ہوسکتا ہے کہ پی آئی اے جہاز کو بھی امریکہ نے ریزر کے ذریعے ایبٹ آباد میں گرایا ہو۔ ڈاکٹر عدنان بھٹہ

 

پاکستانی نژاد امریکی شہری نے امریکن سفیر کو کال کرکے سخت ترین الفاظ میں متنبہ کیا کہ آئندہ اگر پاکستان کو دہشت گرد ملک کہا کہ میں تمھاری دہشت گردی کی ساریں راز فاش کروں گا۔

چترال (گل حماد فاروقی) پاکستان نژاد امریکی شہریت کے حامل ڈاکٹر محمد عدنان بھٹہ نے امریکی سفارت حانہ فون کرکے امریکی سفیر کو اپنا شہریت نمبر اور تعارف کرتے ہوئے کہا کہ میں امریکی شہری ہوں اور موجودہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے میرا فون استعمال کیا۔ اس نے کہا کہ جب امریکی صدر میرا موبائل فون استعمال کرتا ہے تو اس سے آپ کو میرے حیثیت کا اندازہ ہوگا۔

ڈاکٹر عدنان نے کہا کہ امریکی سی آئی اے کے چیف مایک پمپو نے پاکستان کو دہشت گرد ملک کہا ہے۔ اس کے پاس کیا ثبوت ہے کہ پاکستان ایک دہشت گر د ملک ہے۔ انہوں نے امریکی سفیر کو سختی سے کہا کہ پاکستان کوئی دہشت گرد ملک نہیں ہے اگر آپ کے پاس ثبوت ہیں تو اسے سامنے لے آؤ پاکستان اس کے حلاف کاروائی کرے گا۔ 

ڈاکٹر عدنان نے کہا کہ میں پہلے پاکستانی ہوں اور بعد میں امریکی ۔ انہوں نے کہا کہ امریکہ خود ایک دہشت گرد ملک ہے اور چترال سے اسلام آباد جانے والا PIA کا جہاز بھی امریکی فورس نے افغانستان سے ریزر شعاعوں(ریزر ہتھیار ) کے ذریعے مارکر تباہ کیا۔

انہوں نے کہا کہ CIA کے چیف کو کہو کہ وہ اپنے ملک اٹلی چلا جائے وہ اٹلی سے آکر امریکہ سی آئی اے کے چیف بنا ہوا ہے اور پاکستان کو دہشت گرد ملک کہا ہے۔ میں بخوبی جانتا ہوں کہ امریکہ خود کتنا دہشت گرد ہے جس نے مسلم ممالک میں دہشت گردی پھیلائی ہے ۔

ڈاکٹر عدنان نے کہا کہ نہ تو تمھارے پاس کوئی ٹھوس ثبوت ہے اور نہ کوئی شواہد مگر آپ خواہ محواہ پاکستان کے حلاف منفی پروپیگنڈہ کررہے ہیں اور پاکستان کو دہشت گرد ملک کہہ رہے ہیں۔ ڈاکٹر عدنان نے کہا کہ تم وہ قوم ہو جب افغان جنگ کے دوران تم امریکہ میں پاکستانیوں کا ہاتھ چھومتے تھے اور روس کا نام سن کر تمھاری پیشاب چوٹتا تھا اس وقت پاکستان تمھارا بھائی تھا اور اب جب روس کے تکڑے ہوئے تو پاکستان دہشت گرد بن گیا ہے۔انہوں نے کہا کہ سی آئی اے کے چیف کو میرا پغام دو کہ تم اپنے ملک یعنی اٹلی کو واپس جاؤ تمھیں کوئی حق نہیں ہے کہ پاکستان کو دہشت گرد کہو۔ انہوں نے سختی سے کہا کہ میرے پاس ثبوت موجود ہیں کہ تم دہشت گردوں کے ساتھ تعاون کررہے ہو ۔ میں نے یہ بھی دیکھا کہ جب سویت یونین نے افغانستان پر حملہ کیا تھا تو تھمیں جان کی لالے پڑے تھے اور اس وقت امریکہ میں تم افغانستان اور پاکستان کے لوگوں کا ہاتھ چھومتے تھے اور اب یہ بکواس کررہے ہو یہ کھلا تضاد نہیں ہے۔

ڈاکٹر عدنان نے امریکی سفیر کو کہا کہ ڈونلڈ ٹرمپ اور امریکی سی آئی اے کے چیف کو میرا پیغام دو کہ ڈاکٹر عدنان کہتا ہے کہ تم وہ وقت یاد کرو جب تم میرا موبائل فون استعمال کرتے تھے۔

انہوں نے کہا کہ اگر پاکستان کے حلاف منفی پروپیگنڈا بند نہیں کیا تو تم نے جن مسلم ممالک میں دہشت گردی کی ہے میں تو تمام راز فاش کرکے بین الاقوامی میڈیا کے سامنے بتاؤں گا۔ وہ سن آف بچ ہے اسے کہو کہ تم خود دہشت گردوں کو اسلحہ بھی فراہم کرتے ہو، ان کے ساتھ تعاون بھی کرتے ہو اور ان کو اپنے مفاد کیلئے رکھا ہوا ہے۔ 

ڈاکٹر عدنان نے امریکی سفیر کو پیغام بھیجا کہ مسٹر ٹرمپ اور سی آئی اے کے چیف سے کہو کہ تم نے خود دنیا بھر میں دہشت گردی پھیلائی ہے حاص کر مسلم ممالک پر حملہ کرکے ان کے وسائل پر قبضہ کیا۔ تم نے عراق پر حملہ کیا مگر وہاں کوئی کیمیاوی ہتھیار نہیں ملا، ویت نا م پر تم نے حملہ کیا۔ افغانستان پر حملہ کرکے وہاں سے معدنیات قبضے میں لے کر امریکہ پہنچایا کویت پر حملہ کرکے وہاں سے تیل لیا۔میرے پاس کافی ثبوت موجود ہیں کہ تم لوگ کیسے مسلم ممالک میں دہشت گردی کرتے ہو۔ ڈبلیو ایم ٹیز کہاں ہے تم نے اس بہانے حملے کروائے مگر وہاں کچھ بھی نہیں ملا۔آحر میں ڈاکٹر عدنان نے ان کے نہایت سخت الفاظ استعمال کرکے (ان کو گالی دیتے ہوئے ) خبردار کیا کہ اگر امریکہ نے دوبارہ پاکستان کو دہشت گرد ملک کہا کہ یا ان پر کسی قسم کا الزام لگایا تو میں پوری دنیا میں میڈیا کے سامنے امریکہ کو بے نقاب کروں گا۔ امریکی سفیر نے ان سے وعدہ کیا کہ وہ ضرور ان کا پیغام امریکی صدر اور CIA کے چیف کو پہنچادیں گے۔ 



کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

تازہ ترین خبریں