2 جنوری، 2019

امن فاؤنڈیشن 2019 میں بھی ترقی کے سفر کو جاری رکھنے کیلئے پرعزم، نئے اقدامات اور اہم شراکت داریاں عمل میں آئیں گی

امن فاؤنڈیشن 2019 میں بھی ترقی کے سفر کو جاری رکھنے کیلئے پرعزم، نئے اقدامات اور اہم شراکت داریاں عمل میں آئیں گی


کراچی: ملک میں صحت اور تعلیم کے شعبے میں سال 2008سے کام کرنے والے فلاحی ادارے دی امن فاؤنڈیشن کا نئے سال کے موقع پر عزم ہے کہ نئے اقدامات اور اہم شراکت داریوں کی بدولت آنے والے سال میں پہلے سے زیادہ موثر انداز سے کردار ادا کرے گا ۔ اس سمت میں پیش رفت کا آغاز امن فاؤنڈیشن کی رہنمائی میں قائم ہونے والے خود مختار فلاحی ادارے امن ہیلتھ کیئر سروس ( AHCS ) اور پیشنٹس ایڈ فاؤنڈیشن (PAF) کے درمیان اہم معاہدے سے ہوچکا ہے۔

اس معاہدے کے تحت پی اے ایف حکومت سندھ سے امن ہیلتھ کیئر سروس کیلئے گرانٹ کا انتظام کرے گا جس کی بدولت جون 2019 کی عبوری مدت تک امن ایمبولینسز کے آپریشنز کو معاونت فراہم کی جائیگی۔ اس عرصے میں امن ایمبولینس کے آپریشنز امن ہیلتھ کیئر سروس کے زیر انتظام مکمل مستعدی سے جاری رہیں گے ۔

اس معاہدے کے تحت مستقبل میں ایک خود مختار ادارہ قائم کرنے کا ارادہ ہے جس میں امن ہیلتھ کیئر سروس کے بیڑے میں موجود 60 جان بچانے والی ایمبولینسز، انسانی وسائل اور آپریشنز مختص کر دیئے جائیں گے۔

نیا ادارہ جس کا مجوزہ نام سندھ ایمرجنسی میڈیکل سروسز ہوگا وہ کراچی اور سندھ میں امن فاؤنڈیشن کی معاونت سے ایک پبلک پرائیوٹ پارٹنرشپ قائم کر کے ایمبولینس کے موجودہ بیڑے کو کراچی میں 200 اور سندھ کے مختلف اضلاع میں حسب ضرورت وسعت دے گا۔ امن فاؤنڈیشن کے زیر ِ سایہ چلنے والا ایک اور فلاحی ادارہ امن ٹیک ہے۔ اس ادارے نے وکیشنل ٹریننگ اور ٹیکنیکل صلاحیتوں کو بہتر کرنے کیلئے گراں قدر خدمات انجام دی ہیں اور سال 2019 میں یہ ادارہ بھی پبلک اور برائیوٹ سیکٹر کے ساتھ اہم شراکت داریاں کرے گا۔

ان شراکت داریوں کی بدولت موجودہ پروگرام کامیابی سے جاری رہنے کے ساتھ ساتھ آگے بڑھتے ہوئے صوبائی اور ملک گیر سطح پر مزید مواقع پیدا کرے گا۔ مستقبل کے منصوبوں کے بارے میں بات کرتے ہوئے امن فاؤنڈیشن کے کے سی ای او مجاہد کان کا کہنا تھا ، ” امن ہیلتھ اور امن ٹیک دیگر اداروں کے ساتھ اشتراک کے ذریعے اپنے آپریشنز کو مزید وسعت دے رہا ہے ، یہ ہماری بنیادی سوچ کے عین مطابق ہے جس کے تحت ہم امن کے سوشل انٹرپرائز ماڈل کو پاکستان کے معاشرتی انفرا اسٹرکچر کا حصہ بنا چاہتے ہیں۔

امن فاؤنڈیشن اپنی کامیابیوں پر مبنی ٹریک ریکارڈ سے استفادہ حاصل کرتے ہوئے معاشرتی تبدیلی کیلئے فکرانگیزقیادت اور مشاورت کی فراہمی پر توجہ مرکوز رکھنا چاہتی ہے ۔ یہ ادارہ سماجی اور اقتصادی شعبوں میں طویل المیعاد اور پائیدار ترقی کیلئے حکمت عملی ، تکنیکی اور انتظامی مہارت فراہم کرنے اور ممکنہ حد تک مالی وسائل کا انتظام بھی کرے گا۔
“ دس سال قبل اپنے قیام کے آغاز سے اب تک امن فاؤنڈیشن اور اس سے منسلک فلاحی اداروں امن ٹیک اور امن ہیلتھ پاکستان میں صحت اور تعلیم کے شعبوں میں بڑی تبدیلیاں لیکر آئے ہیں ۔ اب تک 12,000 مرد اور خو اتین کو تربیت فراہم کی جا چکی ہے جن میں سے تقریباََ 70 فیصد لوگوں کو با مقصد روز گار فراہم کیا جاچکا ہے ۔ اب تک کراچی اور دیہی سندھ کی سڑکوں پر دس لاکھ سے زائد جانیں بچائی جا چکی ہیں ۔

امن کی بہترین سروس سے آراستہ جان بچانے والی ایمبولینسز میں اب تک 200 سے زیادہ بچوں کی ولادت ہو چکی ہے ۔ پاکستان کی سب سے بڑی صحت کی ہیلپ لائن امن ٹیلی ہیلپ لائن اب تک تقریباََ دس لاکھ سے زائد لوگوں کو احتیاطی اور طبی تجاویزفراہم کر چکی ہے۔ سکھ پروگرام کے تحت دس لاکھ غریب شہریوں کو ان کے گھر کی دہلیز پر فیملی پلاننگ اور زچہ و بچہ کی صحت کے شعبوں میں معیاری کمیونٹی ہیلتھ سروسز فراہم کی جا چکی ہیں۔

امن فاوٴنڈیشن مختلف قومی اور بین الاقوامی ایوارڈز حاصل کرچکی ہیں جن میں امن ٹیک کے طالب علموں اور انسٹرکٹرز کو سٹی اینڈ گلڈز کی طرف سے میڈل آف ایکسی لینس، سینٹر آف ایکسی لینس، امن ٹیک کو جنوبی ایشیاء 2017 کا اسٹیٹس ملنے ، امن ایمبولینس سروس کو ایشین ایمرجنسی کونسل 2014 کی جانب سے بیسٹ ان ایشیاء ای ایم ایس سروس ایوارڈ، سال 2016 میں بی این پی پری باس پرائز برائے انفرادی سخاوت، ہیلتھ کیئر اور تعلیم کے شعبے میں غیرمعمولی کام کرنے پر سال 2016 میں جان ہاپ کنز اسکول آف پبلک ہیلتھ کی جانب سے گلوبل ہیومینی ٹیرین ایوارڈ، سال 2017 میں Schwab فاؤنڈیشن کی جانب سے سوشل انٹرپرینئر آف دی ایئر ایوارڈ اور سال 2016 میں NAVTTCکی جانب سے پرفارمنس ایکسی لینس ایوارڈز شامل ہیں۔




کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

loading...

تازہ ترین خبریں