12 جنوری، 2019

کیلاش: ’ہر کوئی آ کر ہمارا خدا بننے کی کوشش کرتا ہے‘: بی بی سی اردو

 

کیلاش: ’ہر کوئی آ کر ہمارا خدا بننے کی کوشش کرتا ہے‘: بی بی سی اردو

'وادئِ کیلاش کے بارے میں دنیا کی رائے یہ ہے کہ ان کا خدا نہیں ہے، مذہب نہیں ہے، تو ہر کوئی آ کر ہمارا خدا بننے کی کوشش کرتا ہے۔'



یہ کہنا ہے ضلع کونسل چترال کے رکن عمران کبیر کا جو کیلاش کی رُمبر وادی میں بچوں کو کالاشا زبان سکھاتے اور پڑھاتے ہیں اور ساتھ ہی کالاشا مذہب کے فروغ پر بحث کرنے کے لیے فوراً راضی ہو جاتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ 'ہماری زبان کا ادب بالکل موجود نہیں ہے۔ لوگ ہماری اصطلاحات کو سمجھے بغیر ان کے بارے میں بہت غلط غلط باتیں کہتے بھی ہیں، لکھتے بھی ہیں لیکن میرے بحث کرنے پر دور بھاگتے ہیں۔'

عمران نے مثال دیتے ہوئے کہا کہ اگر ایک میت کے آگے لوگ ناچ رہے ہیں تو وہ اُن کے لیے صحیح ہے لیکن باقی دیکھنے والوں کے لیے تعجب کی بات ہوسکتی ہے۔

'میرے لیے یہ زندگی کا جشن ہے۔ آپ روئیں تو بھی مُردہ اسی حال میں ہی رہتا ہے اور اگر آپ ناچیں تو بھی مردے کو فرق نہیں پڑتا۔'
برٹش راج میں پہلی بار کیلاش کے لوگوں کے لیے 'سیاہ کافر' کا لفظ استعمال کیا گیا جس کے بعد کئی کتابوں میں اس کا ذکر کیا گیا۔

عمران کبیر نے بتایا کہ 'ہمارے لیے سب سے بڑا مسئلہ یہی کتابیں ہیں جن کے ذریعے ہم سے بہت سی باتیں منسوب کی گئ ہیں جو ہماری روایات میں شامل نہیں ہیں۔'

انھوں نے کہا کہ کیلاش کے لوگوں کی اصل تعریف یہ ہے کہ یہاں کے لوگ زرتشت سے متاثر ہوئے ہیں اور ان کے بقول یہ زندہ رہنے والا سب سے پرانا مذہب ہے۔

'لیکن اس وقت تاریخ سے زیادہ بڑا مسئلہ ہماری بقا کا ہے۔ ہمارا مذہب زبانی قصے اور کہانیوں کے ذریعے ہم تک پہنچا ہے۔ لیکن آنے والی نسلوں کے لیے ہمیں اسے بچانا ہوگا جس کے لیے اپنی زبان سمجھنا اور اس میں لکھنا ضروری ہے۔'

'کالاشا زبان اور مذہب کو جان بوجھ کرختم کرنے کی کوشش کی جارہی ہے'

کالاش کے رہائشیوں کے مطابق 2005 میں بننے والے پرائمری سکول میں زیادہ تر استاد اور استانیاں باہر کے علاقوں سے پڑھانے آتے ہیں جن کو نہ کیلاش کی زبان کا علم ہے اور نہ ہی مذہب کے بارے۔ ساتھ ہی ایک یا دو سکولوں میں کالاشا زبان پڑھائی جاتی ہے اور یہ نظام بھی منظم نہیں ہے۔

عمران کبیر کے مطابق ’ہماری ضلعی انتظامیہ کا زبان اور مذہب کے فروغ کی طرف رجحان بہت کم ہے۔ ایسا تاثر ملتا ہے جیسے کالاشا زبان اور مذہب کو جان بوجھ کر ختم کرنے کی کوشش کی جارہی ہے۔'

حال ہی میں عمران نے وہاں ایک سکول شروع کیا ہے جو کیلاش میوزیم کے اندر موجود ہے۔ یہاں وہ بچوں کو کالاشا زبان سکھاتے ہیں اور ان کو وہاں کے مذہب کے حوالے سے آگاہی دیتے ہیں۔

'اسی طریقے سے ہم ریاضی، انگریزی اور اردو سکھاتے ہیں۔ اب ہمارا بیانیہ کہ ہم کیا ہیں، ہمارا مذہب کیا ہے، وہ ہمیں اپنے بچوں کے لیے محفوظ کرنا ہے۔ اس سے وہ سارے لوگ جنھوں نے ہمارے بارے میں غلط کتابیں لکھی ہیں، ہم اب ان کا مقابلہ کرسکیں گے۔'

'کیلاش کے باسیوں کے لیے بقا کی جنگ'

یہ کہنا بجا ہوگا کہ ہندوکُش کی پہاڑیوں میں بسنے والے کیلاش قوم کے لوگ اس وقت اپنی بقا کی جنگ لڑ رہے ہیں۔

اقوامِ متحدہ کی ایجوکیشنل، سائنٹفک اور کلچرل آرگنائزیشن نے کئی بار اس قوم کے حوالے سے اعلانات جاری کیے ہیں جس کے مطابق یہ لوگ چند سالوں میں ختم ہوجائیں گے۔

اسی حوالے سے عمران کبیر جیسے لوگ اس وقت کالاشا زبان میں لغت تیار کر رہے ہیں۔ ساتھ ہی ان کا کہنا ہے کہ سکولوں میں دیگر مذاہب بےشک پڑھائے جائیں 'لیکن دوسروں کو جاننے سے پہلے ہمیں خود کے بارے میں جاننا بہت ضروری ہے۔'

انھوں نے بتایا کہ بچوں کے لیے عربی تحریر سے زیادہ رومن تحریر سمجھنا قدرے آسان ہے۔

مکمل سٹوری بی بی سی اردو پر پڑھیں




کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

loading...

تازہ ترین خبریں