17 اپریل، 2019

بیٹے نے والدین پر 1 کروڑ 20 لاکھ روپے ہرجانے کا کیس کردیا، کیوں؟ وجہ جان کر حیرت زدہ ہونگے، پڑھئے

 

بیٹے نے والدین پر 1 کروڑ 20 لاکھ روپے ہرجانے کا کیس کردیا، کیوں؟ وجہ جان کر حیرت زدہ ہونگے، پڑھئے


امریکہ (ٹائمزآف چترال مانیٹرنگ ڈیسک) دنیا ہر مذہب و مسلک والدین کے احترام پر زور دیتا ہے، والدین اپنے بچوں کواچھا اور با کردار فرد بنانے کے لئے کوشاں ہوتے ہیں۔ شاید یہی سوچ لیکر ان والدین نے بھی ایسا کردیا تھا۔ امریکہ کے مشی گن میں فحش مواد ضائع کرنے پر 40 سالہ بیٹے نے معمر والدین کے خلاف ہرجانے کا دعویٰ دائر کردیا ہے۔ بیٹے نے اپنے ماں باپ کے خلاف 86 ہزار ڈالر یعنی ایک کروڑ 20 لاکھ روپے ہرجانے کا کیس دائر کردیا  ہے۔ نوجوان کے مطابق والدین نے اس کے پورن کلیشن باکس میں پورن ویڈیو جمع کر رکھے تھے جبکہ 2 باکس کے اندر سیکس ٹائیز جمع کررکھے تھے، جن کو ضائع کردیا ہے۔ 

انڈیپینڈنٹ کی رپورٹ کے مطابق، نوجوان طلاق کے بعد اکتوبر 2016 میں وہ اپنے والدین کے ساتھ رہنے لگا ، بعد میں خاندان میں اختلاف کے بعد وہ ووہاں سے چلا گیا اور انڈیانا مں رہنے لگا- اس نوجوان نے الزام لگایا کہ جب وہ واپس لوٹا تو پایا کہ اسکے کمرے سے وہ سامان غائب تھا، اپنے والدین کو لکھیے میل میں اس نے کہا کہ اگر آپ کو میرے کسی سامانا سے دقت تھی، تو آپ کو سیدھے سیدھے مجھ سے بات کرنی چاہیے تھی، میں اپنا سامان لیکر کہیں اور چلا جاتا، لیکن آپ سب کچھ جانتے ہوئے چپ رہے  اور میرے سامان کو نقصان پہنچایا-

کورٹ میں ملے دستاویزات کے مطابق اسکے والدین نے جواب میں کہا کہ میں نے ایسا تمہارے منٹل اور ایموشنل ہیلتھ کی وجہ سے کیا ہے، اگر اسکی جگہ ایک کلو کوکین بھی ملتا تو اسے بھی میں برباد کردیتا، میں امید کرتا ہوں کہ ایک دن تم اس بات کو سمجھوگے-

برطانوی اخبار ’دی گارجین‘ کے مطابق اس شخص نے عدالت میں مقدمہ دائر کرتے ہوئے دعویٰ کیا کہ ان کے والدین کے درمیان 2016 میں طلاق ہوگئی تو ان کے خاندان کے تمام افراد الگ ہوگئے تھے۔

مدعی کے مطابق جب ان کے والدین کے درمیان طلاق ہوئی تو وہ بھی انڈیانا منتقل ہوگئے جبکہ انہیں نئے گھر پر ان کے والدین نے ان کا سامان ارسال کیا۔

والدین پر مقدمہ دائر کرنے والے شخص نے دعویٰ کیا کہ ان کے سامان میں فحش مواد کم تھا جبکہ انہیں اپنا پورن ڈیٹا کے 12 کارٹن کم ملے۔

مقدمہ دائر کرنے والے شخص کے مطابق غائب کیے گئے پورن ڈیٹا میں فحش تصاویر اور دیگر مواد پر مبنی جرائد سمیت سی ڈی کلیکشن بھی شامل تھا۔

بیٹے کی جانب سے مقدمہ دائر کرنے کے بعد والدین عدالت میں حاضر ہوئے اور انہوں نے اعتراف کیا کہ انہوں نے بیٹے کا پورن ڈیٹا ضائع کیا۔

مقدمہ دائر کرنے والے شخص کے والد کا کہنا تھا کہ انہوں نے بیٹے کو ایسا مواد جمع کرنے کے لیے سہولیات بھی فراہم کیں، اس لیے وہ ایسا مواد ضائع کرنے کا حق رکھتے ہیں۔

رپورٹ کے مطابق مقدمے کی سماعت ابھی شروع ہوئی ہے تاہم والدین کے خلاف فیصلہ آنے پر 87 ہزار امریکی ڈالر یعنی پاکستانی ایک کروڑ 20 لاکھ روپے ہرجانہ ادا کرنا پڑے گا۔




کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

loading...

تازہ ترین خبریں