اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

19 جولائی، 2019

خیبرپختونخواہ ڈیزاسٹرمنجمنٹ نے چترال سمیت صوبے کے مختلف علاقوں کے لئے بارشوں اور سیلابی ریلوں کا خدشہ ظاہر کرتے ہوئے ہدایات جاری کردی ہیں، دریاؤں میں طغیانی اور پانی کا بہاؤ بڑھ سکتا ہے

 

خیبرپختونخواہ ڈیزاسٹرمنجمنٹ نے چترال سمیت صوبے کے مختلف علاقوں کے لئے بارشوں اور سیلابی ریلوں کا خدشہ ظاہر کرتے ہوئے ہدایات جاری کردی ہیں، دریاؤں میں طغیانی اور پانی کا بہاؤ بڑھ سکتا ہے



پشاور(ٹائمزآف چترال نیوز ڈیسک) خیبرپختونخواہ ڈیزاسٹرمنجمنٹ  نے سوات، دیر اور چترال میں سیلابی ریلے کا خدشہ ظاہرکرتے ہوئے وزیر اعلیٰ محمود خان سمیت کمشنر ملاکنڈ ڈویژن اور متعلقہ اضلاع کے ڈپٹی کمشنر کو آگاہ کرتے ہوئے ہائی الرٹ جاری کردیا ہے۔

پی ڈی ایم اے نے لیٹر جاری کرتے ہوئے ڈپٹی کمشنر چترال، اپر دیر، سوات اور کوہستان کو آنے والے دنوں میں بارشوں اور گلیشر پھٹنے سے پیدا ہونے والے حالات سے نمٹنے کے لئے تیار رہنے کی ہدایات کردی ہیں۔ سیلابی صورتحال سے قبل اقدامت کی بھی ہدایت کردی گئی ہے۔ پی ڈی ایم اے نے سیاحوں کو بھی مختاط رہنے اور پہاڑوں میں نہ جانے کی ہدایت کی ہے۔


 گلیشئر پگھلنے سے دریائے سوات میں طغیانی آنے اور پانی کی سطح بلند ہونے سے قریبی علاقے زیر آب آنے کی رپورٹ تیار کرتے ہوئے عوام کو محفوظ مقامات کو منتقل کرنے کی ہدایت کردی گئی جبکہ سیلاب کی زد میں آنے والے علاقوں کے عوام کومساجد سے لائوڈ سپیکر کے ذریعے محفوظ مقام پر منتقل کرنے سے متعلق آگاہی بھی دی گئی محکمہ نے سیلاب صورتحال کے پیش نظر بعض علاقوں میں غذائی قلت کا بھی خدشہ ظاہر کیا ہے جبکہ اس کے علاوہ ضلعی انتظامیہ کو بھی ہدایت کی گئی ہے کہ عوام کو محفوظ مقامات پر منتقل کرنے میں کردار ادا کرے۔

 پی ڈی ایم اے نے سوات کے علاقہ گبرال کے گائوں جامرہ میں مکانات، باغات ، دفاتر، تعلیمی اداروں اور مراکز صحت کو سیلابی ریلے میں بہہ جانے کا خدشہ ظاہر کیا ہے جبکہ سینکڑوں گائوں کی آبادی کو بھی سیلاب کی زد میں آنے کا خطرہ ظاہر کیا گیا ہے گبرال سے اتروڑ تک ایک کلو میٹر شاہراہ کو سیلاب سے شدید نقصان پہنچا ہے پی ڈی ایم اے نے سیلاب سے شاہراہ کو نقصان پہنچنے اور بڑی گاڑیوں کی آمد رفت ممکن نہ ہونے کی وجہ سے ان علاقوں میں غذائی قلت کا خدشہ ظاہر کیا ہے محکمہ بحالی و آباد کاری کی جانب سے حکومت ، متعلقہ اداروں اور حکام کو تجویز دی گئی ہے کہ محکمہ آبپاشی کی جانب سے جامرہ کے قریب سیلابی پانی کا رخ موڑنے سے مکانات، باغات اور شاہراہ کو بڑے نقصان پہنچنے سے بچا جا سکتا ہے محکمہ بحالی و آباد کاری نے ممکنہ سیلابی صورتحال کے پیش نظر وزیر اعلیٰ محمود خان، کمشنر ملاکنڈ ڈویژن، ڈپٹی کمشنر سوات، ڈپٹی کمشنر دیر اپر، ڈپٹی کمشنر دیر لوئر اور ڈپٹی کمشنر چترال کو ہائی الرٹ جاری کرتے ہوئے پیشگی اقدامات اٹھانے کی ہدایت کر دی ہے ۔

این ڈی ایم اے کے مطابق صوبے کے مختلف علاقوں میں بارشوں کا سلسلہ کچھ دنوں تک جاری رہنے کا امکان ہے۔ جس کی وجہ سے دریاؤں میں طغیانی آسکتی ہے۔ اور پانی کا بہاؤ بڑھ سکتا ہے۔



کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

نوٹ: ٹائمزآف چترال کی انتظامیہ اور اداراتی پالیسی کا بلاگر کے خیالات سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔ اگر آپ بھی چاہتے ہیں کہ آپ کا نقطہ نظر پاکستان اور دنیا بھر کے ناظرین تک پہنچے توآپ بھی قلم اٹھائیے اور 400 سے 700 الفاظ پر مشتمل اپنی تحریر تصویر، مکمل نام، فون نمبر، سوشل میڈیا آئی ڈیز اور اپنے مختصر مگر جامع تعار ف کے ساتھ ہمیں ای میل کریں ای میل ایڈریس timesofchitral@outlook.com آپ اپنے بلاگ کے ساتھ تصاویر اور ویڈیو لنک بھی بھیج سکتے ہیں۔

اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

loading...

تازہ ترین خبریں