اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

31 جولائی، 2019

چترال میں خودکشی کا ایک اور واقعہ۔ اب تو سرکاری ملازمین بھی خودکشی کرنے لگے، چترال پولیس لائن چترال میں ایک سپاہی نے خودکشی کرلی

چترال میں خودکشی کا ایک اور واقعہ۔ اب تو سرکاری ملازمین بھی خودکشی کرنے لگے، چترال پولیس لائن چترال میں ایک سپاہی نے خودکشی کرلی


چترال (گل حماد فاروقی) چترال میں خودکشیوں کا بڑھتا ہوا رحجان کا سلسلہ جاری ہے اب تو سرکاری ملازمین بھی خودکشی کرنے لگے پہلے صرف خواتین خودکشی کیا کرتی تھی۔ تفصیلات کے مطابق پولیس لائن چترال میں سپاہی نذر بن شاہ سکنہ گرم چشمہ منگل کے روز سہ پہر چار بجے پستول سے خود کو گولی مارکر خودکشی کرلی۔سپاہی نذر بن شاہ کا اگلے مہینے شادی ہونے والی تھی اور پہلے بھی اس کی شادی کی تاریح تین مرتبہ منسوح ہوچکی تھی کیونکہ رشتہ داروں میں کوئی نہ کوئی فوتگی ہوتی تھی۔

اس سلسلے میں پولیس کنٹرول روم سے سے مزید معلومات لینے کی کوشش کی گئی مگر کنٹرول روم کے عملہ نے یہ کہتے ہوئے معلومات دینے سے انکار کیا کہ ان کو افسران بالانے معلومات فراہم کرنے سے منع کیا ہے۔ 

نذر بن شاہ نے خودکشی کیوں کی اس کی وجہ تفتیش مکمل ہونے کے بعد معلوم ہوسکے گی۔

واضح رہے کہ خودکشیوں کا رواں مہینے میں یہ ساتواں واقع ہے۔ نو جولائی کو گرم چشمہ میں ایک نوجوان لڑکی نے خودکشی کرلی۔ دس جولائی کو پرسن میں ایک لڑکی نے اسلئے خودکشی کرلی کہ اس کے امتحان میں نمبر کم آئے۔ بارہ جولائی کو جغور میں ایک لڑکی نے نتیجہ نکلنے کے بعد خودکشی کرلی۔ سولہ جولائی کو جنجیریت کوہ میں ایک لڑکی نے خودکشی کرلی۔ تین دن پہلے ایک اور نوجوان لڑکی نے اورغوچ کے مقام پر پل سے دریا میں چھلانگ لگاکر خودکشی کی کوشش کی۔ تاہم وہاں موجود چند نوجوان لڑکوں نے اسے زندہ نکال دیا۔ اس کے علاوہ بالائی چترال میں بھی خودکشی کا واقعہ رونما ہوا تھا۔ اور تیس جولائی کو پولیس لائن چترال میں ایک سپاہی نے خودکشی کرلی جس کی دس سال ملازمت مکمل ہوچکی تھی۔


کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

نوٹ: ٹائمزآف چترال کی انتظامیہ اور اداراتی پالیسی کا بلاگر کے خیالات سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔ اگر آپ بھی چاہتے ہیں کہ آپ کا نقطہ نظر پاکستان اور دنیا بھر کے ناظرین تک پہنچے توآپ بھی قلم اٹھائیے اور 400 سے 700 الفاظ پر مشتمل اپنی تحریر تصویر، مکمل نام، فون نمبر، سوشل میڈیا آئی ڈیز اور اپنے مختصر مگر جامع تعار ف کے ساتھ ہمیں ای میل کریں ای میل ایڈریس timesofchitral@outlook.com آپ اپنے بلاگ کے ساتھ تصاویر اور ویڈیو لنک بھی بھیج سکتے ہیں۔

اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

loading...

تازہ ترین خبریں