اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

30 اکتوبر، 2019

سی این ڈبلیو فنڈ یوٹیلائز کرنے میں ناکام ۔ چترال بونی میں شیلٹر ہوم کے لئے مختص فنڈز دوسرے ضلع منتقل

سی این ڈبلیو فنڈ یوٹیلائز کرنے میں ناکام ۔ چترال بونی میں شیلٹر ہوم کے لئے مختص فنڈز دوسرے ضلع منتقل

چترال( ٹائمزآف چترال : نیوز ڈیسک 30 اکتوبر 2019) بالائی چترال ضلع کے صدر مقام بونی میں خواتین کے لئے شیلٹر ہوم کی تعمیر کے لئے مختص 99.76 ملین روپے کے فنڈز کو دوسرے ضلع میں منتقل کردیا گیا ہے کیونکہ مواصلات اور محکمہ ورکس (سی اینڈ ڈبلیو) مجوزہ مقام پر دیے گئے وقت میں کام شروع کرنے میں ناکام رہا ہے۔ ڈان اخبار کے مطابق محکمہ سی اینڈ ڈبلیو کے محکمہ حکام کو یو ایس ایڈ کے پشاور آفس سے جاری ایک خط میں بتایا گیا ہے کہ آج کے بعد اگر محکمہ اس منصوبے پر کام کیا تو اس کے اخراجات اسے خود برداشت کرنے پڑیں گے اور یو ایس ایڈ فنڈز کی دستیابی کو یقینی نہیں بناسکتا ۔



خط میں کہا گیا ہے کہ کے پی - تعمیر نو پروگرام کے تحت ، یو ایس ایڈ نے دو سال قبل اپر چترال ضلع کے لئے اس منصوبے کی منظوری دے دی تھی اور 15 ستمبر تک سائٹ پر کام شروع کیا جانا تھا اور جون 2020 تک مکمل یہ مکمل ہونا تھا ، لیکن عمل درآمد کرنے والا محکمہ اس منصوبے پر عمل کرنے میں ناکام رہا۔ مجوزہ وقت پر سائٹ پر کام شروع کرنے کے لئے متعلقہ ادارے کو اسی سال جون سے قبل یو ایس ایڈ کے ساتھ پروجیکٹ پر عملدرآمد دستاویز ات پر دستخط کرنا تھا اس کے بعد منصوبے کے لے ڈرائنگ اور ڈیزائن تیار کرنے کے لئے کنسلٹنٹ کی خدمات لینی تھی۔ جو نہ ہوسکا۔

محکمہ سی اینڈ ڈبلیو کو اس غلطی کا ذمہ دار قرار دیتے ہوئے خط میں کہا گیا ہے کہ محکمہ کے اعلی حکام کو بار بار یاد دہانی کرایا گیا لیکن اس کا کوئی نتیجہ برآمد نہیں ہوا ، جس کی وجہ سے یہ ڈیڈ لائن ختم ہوگئی۔ یو ایس ایڈ کا کے پی - تعمیر نو پروگرام 30 جون 2019 تک بند ہونا ہے ، لہذا منصوبوں کو اس تاریخ تک مکمل کرنے کی ضرورت تھی۔

ڈسٹرکٹ ڈویلپمنٹ ایڈوائزری کمیٹی کے چیئرمین وزیر زادہ نے اپنے ضلع سے اس منصوبے کو منتقل کرنے پر برہمی کا اظہار کیا۔ انہوں نے کے پی میں یو ایس ایڈ کے سینئر انتظامیہ سے اس فیصلے پر نظرثانی کرنے کا مطالبہ کیا کیونکہ علاقے میں فوری طور پر شیلٹر ہوم کی ضرورت ہے۔

(ہمیں آپ Twitter ، Instagram اور فیس بک TimesOfChitral پر بھی لائیک کرسکتے ہیں)


کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

نوٹ: ٹائمزآف چترال کی انتظامیہ اور اداراتی پالیسی کا بلاگر کے خیالات سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔ اگر آپ بھی چاہتے ہیں کہ آپ کا نقطہ نظر پاکستان اور دنیا بھر کے ناظرین تک پہنچے توآپ بھی قلم اٹھائیے اور 400 سے 700 الفاظ پر مشتمل اپنی تحریر تصویر، مکمل نام، فون نمبر، سوشل میڈیا آئی ڈیز اور اپنے مختصر مگر جامع تعار ف کے ساتھ ہمیں ای میل کریں ای میل ایڈریس timesofchitral@outlook.com آپ اپنے بلاگ کے ساتھ تصاویر اور ویڈیو لنک بھی بھیج سکتے ہیں۔

اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

تازہ ترین

www.myvoicetv.com

مشہور اشاعتیں

loading...

تازہ ترین خبریں