کسانوں کی خدمات کو سراہنے ان کے لگن اور محنت کے لئے ان کی حوصلہ افزائی کے لئے سکھر میں 'سلام کسان ' اقدام کا خصوصی رنگا رنگ پروگرام

کسانوں کی خدمات کو سراہنے ان کے لگن اور محنت کے لئے ان کی حوصلہ افزائی کے لئے سکھر میں  'سلام کسان ' اقدام کا خصوصی رنگا رنگ پروگرام 



سکھر: پاکستان کے صف اول کے فرٹیلائزر برانڈ سرسبز (Sarsabz) نے اپنے 'سلام کسان، سرسبز پاکستان 'اقدام کے تحت چھوٹے کسانوں کا کردار اجاگر کرنے اور انکی خدمات کو سراہنے کے لئے سکھر کے مہران کلچر آڈیٹوریم میں جمعہ کو ایک خصوصی رنگا رنگ پروگرام کا انعقاد کیا۔ اس پروگرام میں زندگی کے تمام شعبوں سے تعلق رکھنے والے مقامی افراد کے ساتھ اہم حکومتی شخصیات بشمول میئر سکھر بیرسٹر ارسلان شیخ، صوبائی وزیر ٹرانسپورٹ سید اویس قادر شاہ ،پاکستان تحریک انصاف سکھر کے صدر مبین جتوئی اور ڈی پی او عرفان سموں نے بھی شرکت کی۔ اس موقع پر فاطمہ گروپ کی جانب سے مہمانوں کا خیر مقدم کرنے والوں میں ریجنل سیلز منیجر وحید علی تالپور اور ڈیولپمنٹ ہیڈ عبدالثمد ابرو شامل تھے۔ 

سلام کسان پاکستان میں اپنی نوعیت کا پہلا نمایاں اقدام ہے جس کا مقصد پاکستان میں فوڈ سیکورٹی کے چیلنجز سے نمٹنے کے لئے چھوٹے کسانوں کے اہم کردار اور ملکی معیشت میں ان کی نمایاں خدمات کو اجاگر کرنا ہے کیونکہ وہ دہائیوں سے اپنی جائز خوشحالی اور قومی سطح پر خدمات کے اعتراف سے مسلسل نظر انداز رہے ہیں۔

اس پروگرام میں فیملیز کے لئے متعدد دلچسپ اور متاثرکن سرگرمیوں پر لوگ محظوظ ہوئے اور کسانوں کی خدمات اور انکے جذبے کو سراہا گیا۔ اس کے علاوہ اس پروگرام میں مختلف تفریحی سرگرمیاں بشمول آرکیڈ گیمز، فیس پینٹنگ، خواتین کے لئے خصوصی مہندی اسٹالز کے ساتھ چھوٹے بچوں کے لئے خصوصی طور پر کھیلنے کی جگہ بھی موجود تھی۔ یہ پروگرام قرعہ اندازی کے ذریعے انعامات جیتنے کے بعد باوقار طور پر اختتام پذیر ہوا۔

اس اقدام کے بارے میں اظہار خیال کرتے ہوئے فاطمہ گروپ کے ڈائریکٹر مارکیٹنگ اینڈ سیلز خرم جاوید مقبول نے کہا، "پاکستان میں تیزی سے بڑھتی ہوئی آبادی کے تناظر میں چھوٹے کسانوں کے لئے ترغیبات اور معاشی طور پر انہیں بااختیار بنائے بغیر غیرمستحکم فوڈ سیکورٹی چیلنجز سے نہیں نمٹا جاسکتا۔ سلام کسان جیسے اقدامات کے ذریعے ہمارا ارادہ ہے کہ پالیسی سازوں کی توجہ اپنے کسانوں کو معاشی طور پر بااختیار بنانے کی جانب مبذول کرائی جائے، یہ کسان ملک کا اثاثہ ہیں اور اس شعبے میں ترقی اور خوشحالی لانے والی اہم قوت ہیں۔ اس لئے اس مہم میں کسانوں کی برادری کے کردار کو سراہا جارہا ہے اور یہ مہم ان کے مسائل کو عوام سامنے لارہی ہے تاکہ وہ ملکی معیشت میں بہتر انداز سے معاشی کردار ادا کرسکیں۔"

اس موقع پر اظہار خیال کرتے ہوئے سکھر کے میئر بیرسٹر ارسلان اسلام شیخ نے کہا، "ملکی معیشت میں چھوٹے کسانوں کا حصہ 18.5 فیصد ہے جبکہ لیبر فورس میں تناسب 38.5 فیصد ہے۔ اس لئے میں سرسبز فرٹیلائزر کو سلام کسان اقدام کے ذریعے چھوٹے کسانوں کے مسائل اجاگر کرنے کی قائدانہ کاوشوں کو سراہتا ہوں۔ اس اقدام سے چھوٹے کسانوں کو معاشی طور پر خوشحال بنانے کی اہمیت اجاگر ہوگی اور زرعی شعبے میں ترقی لانے کے لئے چھوٹے کسانوں کو معاشی طور پر خوشحال بنانے کی واضح آگہی پیدا ہوگی۔"

پاکستان ایک زرعی ملک ہونے کے باوجود یہاں دہائیوں سے کسانوں کی حوصلہ افزائی اور انکے ساتھ تعاون سے متعلق کوئی نمایاں اقدامات نظر نہیں آئے۔ اس کے برعکس دنیا کے مختلف ممالک میں کسانوں کے اہم کردار کو سراہنے کے لئے خصوصی دن مخصوص کئے جاتے ہیں۔ تاہم فاطمہ گروپ نے سلام کسان اقدام کے ذریعہ قائدانہ کردار کے ساتھ پہل کردی ہے اور وہ پاکستان میں قدیم زرعی ڈھانچے کو جدید خطوط پر استوار کرنے کے لئے کام کررہا ہے۔ اس ضمن میں ٹیکنالوجیز، نئی جدت انگیز مصنوعات اور خدمات متعارف کرانے کے ذریعے کسانوں کو درپیش چیلنجز پر قابو پاکر انکی ترقی کے مواقع پیدا کئے جارہے ہیں۔ یہ مہم ملتان، حیدرآباد اور سیالکوٹ میں بھرپور جذبے سے جاری رہے گی جبکہ قومی سطح پر چھوٹے کسانوں کے مسائل کے بارے میں آگہی پھیلانے کی کوشش جاری رکھی جائے گی۔



Post a Comment

Thank you for your valuable comments and opinion. Please have your comment on this post below.

Previous Post Next Post