-->

اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

8 جنوری، 2020

چترال میں برف باری رحمت کی بجائے عوام کیلئے زحمت کا باعث بنتا ہے۔ بازار میں جلانے کی لکڑی ناپید، گیس اور بجلی مہنگا ہونے کی وجہ سے لوگ خود کو گرم نہیں رکھ سکتے۔

چترال میں برف باری رحمت کی بجائے عوام کیلئے زحمت کا باعث بنتا ہے۔ بازار میں جلانے کی لکڑی ناپید، گیس اور بجلی مہنگا ہونے کی وجہ سے لوگ خود کو گرم نہیں رکھ سکتے۔


چترال(گل حماد فاروقی) چترال میں جب برف باری ہوتی ہے تو  کاروبار زندگی ٹھپ ہوکر رہ جاتی ہے۔ لوگ شدید سردی کی وجہ سے گھروں میں قید ہوکر رہ جاتے ہیں، سڑکوں پر ٹریفک نہ ہونے کے برابر اور بازار میں رش بہت کم ہوتا ہے۔ یہاں کے لوگ خود کو سردی سے بچانے  یعنی خود کو گرم رکھنے اور کھانا پکانے کیلئے عام طور پر لکڑی استعمال کرتے ہیں  جس کی وجہ سے جنگلات کی بے دریغ کٹائی ہوتی ہے۔ 
جبکہ گیس پلانٹ کی پچھلی حکومت میں افتتاح بھی ہوئی تھی اور سینگور کے مقام پر کوئی چالیس کنال زمین بھی خریدی گئی  موجودہ حکومت نے اس پر کام روک دیا۔
بجلی کی نرح آئے روز مہنگا ہوتا جارہا ہے جس کی وجہ سے لوگ بجلی نہایت احتیاط سے خرچ کرتی ہے۔ جب برف باری رکتی ہے تو لوگو ں کا ایک اور پا ٹھیک نکلتی ہے ۔ یعنی وہ اپنے گھروں کے چھتوں سے حصوصی طور ہپر  لکڑی سے بنے ہوئے  بلچوں سے برف ہٹاتے ہیں تاکہ ان کا چھت گرنے سے بچ جائے اور برف زیادہ دیر تک چھت پر پڑا رہنے سے ان کے مکانا ت ٹھپکتے ہیں۔ سردی کی وجہ سے  پینے کی پائپ پھٹ جاتی ہے۔ اور لوگوں کو پانی کی بھی قلعت کا مسئلہ درپیش ہوتا ہے۔ 
محکمہ جنگلات  کے ڈویژنل فارسٹ آفیسر شوکت فیاض خٹک کا کہنا ہے کہ چترال میں جنگلات کی پیداوار بہت کم ہے جبکہ اس کی استعمال بہت زیادہ ہے اور متبادل ایندھن نہ ہونے کی وجہ سے  یہا ں کے لوگ  لکڑی  جلاتے ہیں جس سے جنگلات پر بہت بوجھ  پڑتا ہے اور اگر متبادل توانائی یا ایندھن کا بندوبست نہیں کیا گیا تو  اگلے تیس سالوں میں کوئی درخت نظر نہیں آئے گا۔ 
مقامی لوگ صوبائی اور وفاقی حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ چترال میں گیس کے منصوبے پر فوری طور پر دوبارہ کام کا آغاز کیا جائے اور ان کو مفت یا سستی بجلی فراہم کی جائے تاکہ یہ لوگ خود کو سردی سے بچانے  اور کھانا پکانے کیلئے گیس یا بجلی کا ہیٹر استعمال کرے تاکہ جنگلات پر بوجھ کم پڑے اور جنگلات کی بے دریغ کٹائی کی وجہ سے قدرتی آفات آنے سے بڑے پیمانے پر جانی اور مالی نقصان ہوتا ہے۔ اگر حکومت اربوں روپے کا معاوضہ دینے کی بجائے واپڈا یا پیسکو کو صرف چند کروڑ روپے دے تاکہ اس کے عوض  لوگوں کو سستی بجلی فراہم کی جاسکے تو جنگلات بچ جائیں گے اور قدرتی آفات کم سے کم آئیں گے۔

کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

نوٹ: ٹائمزآف چترال کی انتظامیہ اور اداراتی پالیسی کا بلاگر کے خیالات سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔ اگر آپ بھی چاہتے ہیں کہ آپ کا نقطہ نظر پاکستان اور دنیا بھر کے ناظرین تک پہنچے توآپ بھی قلم اٹھائیے اور 400 سے 700 الفاظ پر مشتمل اپنی تحریر تصویر، مکمل نام، فون نمبر، سوشل میڈیا آئی ڈیز اور اپنے مختصر مگر جامع تعار ف کے ساتھ ہمیں ای میل کریں ای میل ایڈریس timesofchitral@outlook.com آپ اپنے بلاگ کے ساتھ تصاویر اور ویڈیو لنک بھی بھیج سکتے ہیں۔

اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

تازہ ترین

www.myvoicetv.com

مشہور اشاعتیں

loading...

تازہ ترین خبریں