-->

اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

18 ستمبر، 2020

بوند بوند کو ترستی ریشن کی عوام - ریشن راغین کی عوام 23 دنوں سے پانی سے مکمل طور پر محروم ہے

 

بوند بوند کو ترستی ریشن کی عوام  - ریشن  راغین کی عوام  23 دنوں سے پانی سے مکمل طور پر محروم ہے،  ویسے تو  ہمیشہ سے پینے کے صاف پانی سے محروم ہے۔




کہنے کو ریشن پانی کے لئے مشہور ہے۔ یہاں دریا بہتا ہے۔ دریائے بھی ایسا کہ ہر دوسال بعد سیلاب کی شکل اختیار کرتا ہے ۔ 26 اگست 2020 کو بارشوں کے بعد ریشن میں بدترین سیلاب آیا تھا ۔ جس نے نہ صرف پائب لائن، آبپاشی کے نظام  کو تباہ کرکے رکھ دیا تھا۔ اس کے لئے ریشن دریا  کے اوپر چترال روڈ کو مستوج  سے ملانے والے پل کو بھی بہا کر لے گیا تھا ۔ مسجد ، سکول اور لوگوں کے گھروں اور باغات اور کھڑی فصلوں کو تباہ کرکے رکھ دیا تھا۔   ریشن کی عوام آج تک امداد  کی منتظر ہے۔ حکومتی نمائندے آتے ہیں لیکن بیانات دیتے اور وعدے کرکے چلے جاتے ہیں۔  

ریشن میں سب سے بڑا مسئلہ ان دنوں پینے کے پانی کا ہے۔  راغین ، بیگلاندہ، آڑیان، خوراگول، پناندہ، توردہ اور سارندوری کے رہائشی پانی سے مکمل طور پر محروم ہیں۔ ریشن نارزوم میں بھی پینے کا پانی نہیں ہے۔ پائن لائینیں تباہ ہوچکی ہیں۔   خواتین اور بچے دور دراز سے پانی لانے پر مجبور ہیں۔ فائر بریگیڈ کی گاڑی سے پانی سپلائی کیا جاتا ہے جو کہ ناکافی ہونے کے ساتھ ساتھ غیر معیاری بھی  ہے۔   یہ سلسلہ  22 دن سے جاری ہے۔ تبدیلی سرکار ، مقامی ادارے، این جی اوز  ، حکومتی نمائندگان اس جانب توجہ دیکر پانی کے مسئلے کو جلد حل کریں۔  سیلاب زدہ عوام کی مشکلات کم کئے جائیں۔   

خواتین اور بچوں کا کہنا کہ حکومت کہاں ہے۔ ہمارے مقامی نمائندے جو الیکشن کے وقت ووٹ لینے کے لئے طرح طرح کے وعدے کرتے ہیں ، آج 23 دن گزر گئے ، وہ کہاں ہیں۔ لوگ بوند بوند ترس گئے۔  فائر بریگیڈ کی گاڑی میں آنے والا پانی طویل انتظار کے بعد ایک بالٹی ملتی ہے، اس سے ہم کیسے گزارہ کرلیں گے۔  

حکومت اس مئلے کی جانب توجہ فرمائیں۔ اور ریشن پائب لائن کو جلد از جلد مرمت کرکے پانی کی فراہمی کو یقینی بنائیں۔





کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

نوٹ: ٹائمزآف چترال کی انتظامیہ اور اداراتی پالیسی کا بلاگر کے خیالات سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔ اگر آپ بھی چاہتے ہیں کہ آپ کا نقطہ نظر پاکستان اور دنیا بھر کے ناظرین تک پہنچے توآپ بھی قلم اٹھائیے اور 400 سے 700 الفاظ پر مشتمل اپنی تحریر تصویر، مکمل نام، فون نمبر، سوشل میڈیا آئی ڈیز اور اپنے مختصر مگر جامع تعار ف کے ساتھ ہمیں ای میل کریں ای میل ایڈریس timesofchitral@outlook.com آپ اپنے بلاگ کے ساتھ تصاویر اور ویڈیو لنک بھی بھیج سکتے ہیں۔

اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

تازہ ترین

www.myvoicetv.com

مشہور اشاعتیں

loading...

تازہ ترین خبریں