-->

اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

20 نومبر، 2020

وزارتِ انسانی حقوق اور یونیسف بچوں کا عالمی دن منا رہے ہیں، پاکستان کی اہم اور تاریخی عمارتوں کو نیلے رنگ کی روشنی سے سجا دیا گیا ہے

 

پاکستان بھر کے اہم مقامات اور یادگاری عمارات پر  بچوں کے حقوق کی حمایت کے اظہار کے لئے نیلے رنگ کی روشنی میں دکھائی دیں گی۔
 
اسلام آباد، پاکستان، 20 نومبر 2020 – آج کے روز پاکستان بھر کی 20 عمارتیں بچوں کے عالمی دن کے موقع پر بچوں کے حقوق کی حمایت کے اظہار میں نیلے رنگ میں نہائی دکھائی دیں گی۔ بچوں کا عالمی دن بچوں کے لئے اور بچوں کی جانب سے عملی اقدامات اٹھانے کا دن ہے۔ اس روز بچوں کے حقوق کے کنونشن (سی آر سی) کے تحت دنیا بھر کے لاکھوں بچوں کو ان کے حقوق سے آگہی کی ضروررت پر زور دیا جاتا ہے۔ 

یہ اہم دن منانے کے لئے پاکستان کے ہر صوبے میں 20 نومبر کی شب وزارتِ انسانی حقوق اور یونیسف ملک بھر کی 20 اہم، تاریخی اور یادگاری عمارات کو نیلے رنگ کی روشنیوں میں میں نہلا دیا جائے گا۔ واضح رہے ان  عمارات کو نیلے رنگ کی روشنی سے بچوں کے حقوق کی حمایت کی علامت کے طور روشن کیا جائے گا  ۔ اس طرح یہ مسلسل تیسرا سال ہوگا جب پاکستان اور دنیا بھر میں بچوں کے حقوق کے عالمی دن کے موقع پر اہم، تاریخی اور یادگاری نوعیت کی عمارات کو نیلی روشنی سے منور کیا جائے گا اور یہ اس بات کا اظہار ہوگا کہ دنیا بچوں کے حقوق کے کنونشن کے نصب العین (وژن) کو ہر بچے کے لئے حقیقت میں بدلنے کے لئے عملی اقدامات کی حمایت کرتی ہے۔ 

وفاقی وزیرِ برائے انسانی حقوق ڈاکٹر شیریں مزاری نے اس موقع پر بات کرتے ہوئے کہا: 
’’ آج کی رات بچوں کا عالمی دن منانے اور بچوں سے یکجہتی کے اظہار کے لئے پاکستان اور دنیا بھر کی اہم عمارات نیلے رنگ کی روشنی سے روشن کی جائیں گی۔ یہ علامتی عمل حکومت کے اس عزم کا بھی اظہار ہوگا کہ حکومت پاکستان بچوں کے حقوق کے تحفظ کے لئے بے حد سنجیدہ ہے اور اس بات کو یقینی بنانا چاہتی ہے کہ ہمارے بچے ہر قسم کے استحصال سے محفوظ ہیں۔ ہم اس بات کو یقینی بنانے کے لئے اپنا کام جاری رکھیں گے کہ ہمارے بچے ، جو نہ صرف ہمارا سرمایہ ہیں بلکہ ہماری قوم کا مستقبل ہیں، محفوظ اور  اپنی صلاحیتوں فروغ کے لئے موذوں ماحول میں سانس لے رہے ہیں‘‘۔ 

بچوں کے حقوق کے عالمی دن کے موقع پر بات کرتے ہوئے انسانی حقوق کی وزارت کی سیکرٹری مس رابعہ جویری آغا نے کہا، ’’ بچوں کا عالمی دن ہمیں ایک بار پھر یہ یاد کرنے کا موقع فراہم کرتا ہے ہمارے لئے اپنے بچوں کو عزیز رکھنا، انہیں تحفظ اور تقویت دینا کس حد تک ضروری ہے۔ حکومت اپنی کارکردگی اور شراکت داروں کی مدد سے ہماری مدد کرے گی کہ ہم اپنے بچوں کو ایک بہتر دنیا دے سکیں، ایک ایسی دنیا جہاں وہ اپنے خوابوں کی تعبیر پاکر محفوظ اور خوف سے پاک زندگی گذار سکیں‘‘۔ 

بچوں کے عالمی دن کے موقع پر اس عزم کا اظہار کیا جاتا ہے کہ ہم بچوں، نو بالغوں اور نوجوانوں کی بات غور سے سنیں گے، ان کے مسائل اور مطالبات پر غور کریں گے اور انہیں ان کے مسائل کے حل تلاش کرنے کے لئے فیصلہ سازی کے عمل میں بھی شامل کیا جائے گا۔ بچوں کے مسائل کے حل کے لئے کی جانے والی فیصلہ سازی میں ان کی شمولیت اس لئے نہایت ضروری ہے کیونکہ یہ فیصلے بچوں کے مستقبل پر اثر انداز ہوتے ہیں خاص طور پر اس سال کووِڈ- 19 کی وجہ سے آنے والے بحران نے بچوں کے لئے نئی مشکلات پیدا کردی ہیں۔ 



اس موقع پر بات کرتے ہوئے پاکستان میں یونیسف کی نمائندہ مس عائدہ گرما نے کہا: 
’’ جب پاکستان میں لاکھوں بچوں کی صورتِ حال میں بہتری آئی ہے وہاں دیگر لاکھوں بچے آج بھی غربت ، عدم مساوات اور ضروری سہولیات تک مساوی رسائی جیسے مسائل سے نبرد آزما ہیں۔‘‘

انہوں نے مزید کہا: 
’’کووِڈ- 19 کی وجہ سے آنے والا بحران بچوں کے حقوق کا بحران ہے۔ ہم سب کو  اس سلسلے میں مل جل کر کام کرنے کی ضرورت ہے کیونکہ عالمی وبا بچوں کی تعلیم، غذا اور صحت کو وہ نقصان پہنچا رہی ہے جس کی تلافی ممکن نہیں۔ ہمیں اس بات کو یقینی بنانے کی ضرورت ہے کہ ہر بچے کو وہ ضروری خدمات فراہم کی جارہی ہیں جن کا حصول اس کا بنیادی ہے حق ہے۔ ان خدمات سے بچوں کی بقا، صحت، تعلیم اور ان کی صلاحیتوں کے  بھرپور اظہار کا حق مشروط ہے۔ یونیسف پاکستانی بچوں اور لوگوں کی ہر ممکن مدد کررہا ہے تاکہ وہ وبائی صورتِ حال سے جلد از جلد نجات حاصل کرسکیں۔ ہم پاکستانی حکومت مدد جاری رکھیں گے تاکہ پاکستان کا کوئی بھی بچہ پیچھے نہ رہ پائے‘‘۔ 

بچوں کے عالمی دن کے کنونشن کی منظوری 20 نومبر 1989 کو عمل میں آئی تھی اور پاکستان نے اس کے اگلے برس اس کنونشن کی توثیق کردی تھی۔ 
  

کوئی تبصرے نہیں:
Write comments

خبروں اور ویڈیوز کے لئے ہماری ویب سائیٹ وزیٹ کیجئے: پوسٹ پر تبصرہ کرنے کے لئے شکریہ۔ آپ کا تبصرہ جائزے کے بعد جلد پیج پر نمودار ہوجائے گا۔ شکریہ

نوٹ: ٹائمزآف چترال کی انتظامیہ اور اداراتی پالیسی کا بلاگر کے خیالات سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔ اگر آپ بھی چاہتے ہیں کہ آپ کا نقطہ نظر پاکستان اور دنیا بھر کے ناظرین تک پہنچے توآپ بھی قلم اٹھائیے اور 400 سے 700 الفاظ پر مشتمل اپنی تحریر تصویر، مکمل نام، فون نمبر، سوشل میڈیا آئی ڈیز اور اپنے مختصر مگر جامع تعار ف کے ساتھ ہمیں ای میل کریں ای میل ایڈریس timesofchitral@outlook.com آپ اپنے بلاگ کے ساتھ تصاویر اور ویڈیو لنک بھی بھیج سکتے ہیں۔

اپنے فیس بک آئی ڈی سے بھی آپ ویب سائیٹ پر کسی نیوز
یا بلاگ پر کومنٹ کرسکتے ہیں۔

تازہ ترین

www.myvoicetv.com

مشہور اشاعتیں

loading...

تازہ ترین خبریں