17 جنوری، 2019

ریشن، چترال کی ہونہار بیٹی آسیہ وزیر کے لئے گولڈ مڈل کا اعزاز

ریشن، چترال کی ہونہار بیٹی آسیہ وزیر کے لئے گولڈ مڈل کا اعزاز 


چترال (ٹائمزآف چترال نیوز) ریشن کی ہونہار بیٹی آسیہ وزیر گولڈ میڈل کے ساتھ پشاور یونیورسٹی سے اپنی گریجویشن مکمل کرلی ہے۔ آسیہ ساتویں جماعت تک ریشن کے ایک پرائیویٹ سکول سے تعلیم حاصل کی جس کے بعد وہ آغاخان ہائر سکنڈری سکول کوراغ میں داخلہ لے لیا۔ یہاں سے میٹرک کا امتحان پاس کرنے کے بعد وہ گورنمنٹ گرلز ڈگری کالج بونی سے ایف ایس سی کرلی۔ اپنے تعلیمی کیریئر میں انہوں نے متعدد ایوارڈز اپنے نام کئے۔ اے کی ای ایس پی سکالرشپ انڈر گریجویٹ پروگرام، وزیر اعظم لیپ ٹاپ سکیم سے لیپٹ ٹاپ، مسلسل تین سال بہترین سٹوڈنٹ ایوارڈ کے علاوہ متعدد ایوارڈ جیتے ہیں۔ 

آسیہ نے گولڈ میڈل اپنے والد کو ڈیڈیکیٹ کرتے ہوئے بولی کہ جب میں چھٹے سمسٹر میں تھی تو میرے والد فوت ہوئے۔ اب جبکہ میرے والد جسمانی طور پر میرے ساتھ نہیں لیکن میں اپنی زندگی کے لمحے ان کی موجودگی کو محسوس کرتی ہوں۔ 



16 جنوری، 2019

گورنر تبوک نےعمران خان کو سونے کی کلاشنکوف کا تحفہ پیش کیا، یہ پاکستان کیوں آئے ہیں جاننے کے لئے پڑھیں

گورنر تبوک نےعمران خان کو سونے کی کلاشنکوف کا تحفہ پیش کیا، یہ پاکستان کیوں آئے ہیں جاننے کے لئے پڑھیں



اسلام آباد (ویب ڈیسک)  سعودی شہر تبوک کے گورنر نےعمران خان کو سونے کی کلاشنکوف کا تحفہ پیش کیا ہے۔ گورنر نایاب پرندے تلور کے شکار کیلئے پاکستان  آئے ہوئے ہیں۔ اسلام آباد میں  گورنر شہزادہ فہد بن سلطان نے وزیراعظم عمران خان کو سونے کی کلاشنکوف کا قیمتی تحفہ پیش کیا ہے۔ 

وزیراعظم ہاؤس میں ہونے والی ملاقات میں وزیر دفاع پرویز خٹک اور خارجہ سیکریٹری تہمینہ جنجوعہ بھی موجود تھیں۔  گورنر شہزادہ فہد بن سلطان نے وزیراعظم عمران خان سے ملاقات کی جس میں دو طرفہ امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ اس ملاقات میں شہزادہ فہد بن سلطان بن عبدالعزیز السعود نے وزیراعظم عمران خان کو سونے کی (گولڈ پلیٹڈ) کلاشنکوف تحفے میں دی۔

بعد ازاں گورنر شہزادہ فہد بن سلطان بن عبدالعزیز السعود تلور کے شکار چاغی پہنچے جہاں دالبندین ائیرپورٹ پر وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان، صوبائی وزیر خزانہ میر محمدعارف محمدحسنی سمیت دیگراعلیٰ حکام نے ان کا استقبال کیا اور انہیں گارڈ آف آنر پیش کیا گیا۔



بچے کی ولادت پر والد کو 10 دن لازمی چھٹی دینے کا قانون، وفاقی وزیر کی تصدیق

بچے کی ولادت پر والد کو 10 دن لازمی چھٹی دینے کا قانون، وفاقی وزیر کی تصدیق

اسلام آباد (ویب ڈیسک) حکومت نے بچے کی ولادت پر والد کو 10 دن چھٹی دینے کا قانون نافذ کردیا ہے، وفاقی وزیر کی تصدیق برائے انسانی حقوق شیریں مزاری نے قانون کے اطلاق کی تصدیق کردی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس سے قبل پاکستان میں اس حوالے سے کوئی قانونی سازی نہیں کی گئی۔ تاہم اب موجودہ حکومت نے نئی یہ پالیسی نافذ کردی ہے۔

قانون کا اطلاق تمام سرکاری اور نجی اداروں پر ہوگا۔ وفاقی حکومت کی جانب سے سرکاری اور نجی اداروں میں کام کرنے والے مرد حضرات کیلئے یہ شاندار اعلان کیا گیا ہے کہ حکومت کی جانب سے نافذ کیے جانے والے نئے قانون کے مطابق اب بچے کی ولادت پر والد کو 10 روز کی رخصت دینا ہر ادارے اور کمپنی کےلئے لازمی ہوگا۔





طالبان کے حملے میں 4 جان بحق 100 سے زائد زخمی ہوگئے



طالبان کے حملے میں 4 جان بحق 100 سے زائد زخمی ہوگئے

کابل (ویب ڈیسک) طالبان کے حملے میں 4 جان بحق 100 سے زائد زخمی ہوگئے ہیں۔ گزشتہ روز کے کار بم حملے کی ذمہ دار طالبان نے قبول کی ہے۔ افغان دارالحکومت، کابل کے قریب حملے میں 4 افراد جان بحق ہوگئے تھے۔ طالبان روز افغانستان کے کہیں نہ کہیں حملہ آور ہوجاتے ہیں اور یہ اس نوعیت کا تازہ حملہ تھا۔ طالبان آدھے افغانستان پر قابض ہیں، جو افغان فورسز کو نشانہ بناتے رہتے ہیں۔ 


محکمہ ماحولیات کے لئے ایک ارب9 کروڑ70 لاکھ روپے کی اضافی فنڈ جاری کئے گئے

محکمہ ماحولیات کے لئے ایک ارب9 کروڑ70 لاکھ روپے کی اضافی فنڈ جاری کئے گئے


پشاور(مانیٹرنگ ڈیسک) ماحولیات پاکستان کا بڑا مسئلہ رہا ہے اور پلاننگ نہ ہونے کی وجہ سے ایسا لگ رہا ہے کہ رہے گا۔ اس ضمن میں خیبر پختونخوا حکومت نے رواں مالی سال کے ابتدائی 6 ماہ کے دوران محکمہ ماحولیات کے ایک منصوبے کیلئے مختص بجٹ سے ایک ارب 9 کروڑ 70لاکھ روپے اضافی جاری کر دیئے ہیں۔ تفصیلی دستاویزات کے مطابق جنگلات اور آبی حیات کے تحفظ اوربہتری کے منصوبے کیلئے رواں مالی سال کے آغاز پر 4 ارب77کروڑ60لاکھ روپے مختص کئے گئے تھے لیکن 6 ماہ کے دوران اس منصوبے  کیلئے ایک ارب9 کروڑ70 لاکھ روپے کی اضافی فنڈ جاری کئے گئے ہیں۔ فنڈ سےماحول کو بچانے کیلئے آگاہی مہم چلانا، تربیت یافتہ فورس کی تشکیل، زیر زمین پانی اور ماحولیاتی آلودگی کیلئے اقدامات کئے جائیں گے۔




15 جنوری، 2019

انڈس موٹر کمپنی نے ملٹی نیشنل کمپنیز کی کیٹیگری میں گلوبل کمپیکٹ نیٹ ورک پاکستان2018 ءکا ایوارڈ جیت لیا

انڈس موٹر کمپنی نے ملٹی نیشنل کمپنیز کی کیٹیگری میں گلوبل کمپیکٹ نیٹ ورک پاکستان2018 ءکا ایوارڈ جیت لیا


کراچی: انڈس موٹرز کمپنی نے ملٹی نیشنل کمپنیز کی کیٹیگری میں گلوبل کمپیکٹ نیٹ ورک پاکستان 2018 ءکا سیکنڈ پرائز برائے Business Sustainablity Award 2018 حاصل کر لیا ہے۔ اس اعلیٰ ایوارڈ کا ملنا یو نائیٹڈ نیشن گلوبل کمپیکٹ (UNGC) کے دس اصولوں کو پورا کرنے اور سسٹین ایبل ڈیولپمنٹ گولز (SDGs) کو پورا کرنے کی توثیق ہے۔


مسلسل چوتھی مرتبہ اس ایوارڈ کا جیتنا، معیارِ زندگی کو بڑھانے اور اقوام متحدہ کے مستقل ترقی کے اہداف کے ساتھ مکمل ہم آہنگ ہوکر ایک صحت مند مستقبل کی طرف قدم بڑھانے میں معاونت کرنے کے IMC کے مسلسل عزم کی نشاندھی کرتا ہے۔، لہذا، کمپنی ہمیشہ اچھی گورننس پر عمل کرنے کو ترجیح دیتی ہے،جس کا مقصد انتظامیہ اور ملازمین کے عملدرآمد کے لئے انضباطی کنٹرول، باقاعدگی سے آڈٹ اور شفافیت ، واضح منیجمنٹ کے ذریعے کام اور تمام کارکنوں کے لئے منصفانہ ماحول فراہم کرنے کے لئے احترامِ مزدور قوانین کو یقینی بنانا ہے۔کمپنی نے بہترین آپریشنل طریقوں پر عملدرآمد اور صحت سمیت حفاظت کے سخت معیار کو برقرار رکھنے کے ذریعے ماحولیاتی تحفظ کو فروغ دینے میں معاونت کی ہے۔

اس موقع پر اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے، IMC کے چیف ایگزیکٹو آفیسر، علی اصغر جمالی نے کہا:
”ہم اپنے بزنس آپریشن میں بہترین طریقوں کو برقرار رکھتے ہیںجس کا اعتراف GNCP کی جانب سے اس ایوارڈ کا ملنا ہے۔ یہ توثیق نہ صرف یہ کہ UNGC اصولوں کے مطابق ہمارے مشن کو جاری رکھنے کے لئے حوصلہ افزائی فراہم کرتی ہے اور SDGs کے لئے ہماری معاونت کرتی ہے۔

انہوں نے مزید کہا آج کی کاروباری دنیا میں،سسٹین ایبل موومنٹ حکومتوں اور کاروباری اداروں کو چلانے کے لئے دنیا بھر میں پذیرائی حاصل کر رہی ہے، جو نہ صرف یہ کہ ماحول اور معاشرے کے لئے اچھی ہے،بلکہ کمپنی کے لئے بھی فائدہ مند ہے۔



ایل جی نے عالمی نمائش میں انتہائی کم وزن کے حامل لیپ ٹاپس متعارف کرادیئے

ایل جی نے عالمی نمائش میں انتہائی کم وزن کے حامل لیپ ٹاپس متعارف کرادیئے

کراچی: ایل جی الیکٹرانکس (ایل جی) نے عالمی ٹیکنالوجی نمائش سی ای ایس 2019 میں انتہائی کم وزنی اور جدید ترین لیپ ٹاپس متعارف کرانے کا اعلان کیا ہے۔ اسکے نئے لیپ ٹاپس ایل جی گرام 17 اور 14 انچ کا ایل جی گرام 2 ان 1 سی ای ایس کے اننوویشن ایوارڈز کے حصول کی دوڑ میں شامل ہوگئے ہیں۔ 



ایل جی گرام 17 مزید پروسیسنگ پاور اور مجموعی کارآمد کے ساتھ ٹیکنالوجی اور نئے فیچرز کا امتزاج ہے۔ اسے ایک جگہ سے دوسری جگہ لے جانا پہلے سے کہیں زیادہ آسان ہے۔ اس میں 14 انچ کا ماڈل 2 ان 1 کنورٹیبل لیپ ٹاپ آسانی سے ٹیبلٹ میں تبدیل ہوسکتا ہے جس کی وجہ سے کمپیوٹنگ کی خدمات وسیع انداز سے استعمال کیا جاسکتا ہے ۔ 

صارفین عام طور پر لیپ ٹاپ کی خریداری کے وقت آسانی سے اسکی نقل و حمل اور کارکردگی میں سے کسی ایک چیز کا انتخاب کرتے ہیں۔ ایل جی گرام 17 لیپ ٹاپ ان دونوں پہلوؤں سے صارفین کی ضروریات پوری کرتا ہے۔ اس میں 17 انچ کی ہائی ریزولوشن ڈسپلے کا بڑا ڈسپلے بھی ہے۔ 

17 انچ کے ایل جی گرام لیپ ٹاپ میں وائیڈ کواڈ ایکسٹینڈڈ گرافکس ایرے ڈسپلے ہے جس میں 2560 بائی 1600 کا اسٹینڈرڈ فل ایچ ڈی اسکرین ہے جس کی بدولت بہترین رنگوں کے ساتھ انتہائی اعلیٰ معیار کا ڈسپلے ہے ۔ روایتی 16:9 فارمیٹ کے مقابلے میں اس کے ڈسپلے کا 16:10 ریشو ہے جو امیج اور وڈیو ایڈیٹنگ کے لئے آئیڈیل ہے جس کی بدولت مختلف دستاویزات پر بیک وقت دیکھا جاسکتا ہے اور مختلف ایپلی کیشنز کو چلایا جاسکتا ہے 

عام طور پر 17 انچ کے لیپ ٹاپ 2 کلو گرام سے زائد وزنی ہوتا ہے، تاہم ایل جی گرام 17 لیپ ٹاپ صرف 1340 گرام وزنی ہے۔ اس کا ہلکا وزن بوقت ضرورت ایک جگہ سے دوسری جگہ لے جانے کے لئے بہترین ہیں۔ اس میں 72 واٹ کی بیٹری کی بدولت ایک بار چارج کرنے کے بعد اسے 19.5 گھنٹے چلایا جاسکتا ہے۔ یہ پتلا اور اسٹائلش ہونے کے ساتھ انتہائی مضبوط بھی ہے اور امریکی ملٹری کے سخت ٹیسٹ سے مطابقت رکھتا ہے جس میں جھٹکے، دھول اور انتہائی زیادہ درجہ حرارت سے مزاحمت شامل ہے۔ اسی طرح ایل گرام 2 ان 1 لیپ ٹاپ بھی جدت انگیز خصوصیات کا حامل ہے اسے باسہولت انداز سے فولڈ کرکے ٹیبلٹ میں تبدیل کیا جاسکتا ہے۔ اس میں کورننگ گوریلا گلاس 5 ہے جس کی بدولت یہ پانی کے قطروں، جھٹکوں سے روکتا ہے اور ڈسپلے کی حفاظت کرتا ہے۔ اس میں 72 واٹ بیٹری کے ساتھ اسے 21 گھنٹے تک استعمال کیا جاسکتا ہے۔ 

ایل جی کے آئی ٹی بزنس ڈیویژن کے ہیڈ اک ہوان نے کہا، "ایل جی گرام لیپ ٹاپس نے صارفین کی ضروریات کے مطابق اسے تبدیل کیا ہے۔ یہ انتہائی کم وزنی لیپ ٹاپس باسہولت انداز سے لے جانے کے ساتھ بہترین کارکردگی کے حامل ہیں۔ خوبصورت ڈسپلے، متاثرکن ڈیزائن، بھرپور بیٹری اور شاندار کارکردگی کے ساتھ ایل جی کے سال 2019 میں نئے گرام ماڈل لیپ ٹاپس بالکل نئی سطح پر صارفین کو سہولت فراہم کرتے ہیں۔" 



ویلنٹائن ڈے کی جگہ سسٹرز ڈے نے لی، پاکستان کے ایک مقامی یونیورسٹی کی جانب سے بڑا اعلان سامنے آگیا

ویلنٹائن ڈے کی جگہ سسٹرز ڈے نے لی، پاکستان کے ایک مقامی یونیورسٹی کی جانب سے بڑا اعلان سامنے آگیا


فیصل آباد (ویب ڈیسک) ویلنٹائن ڈے کی جگہ سسٹرز ڈے نے لی، ایک مقامی یونیورسٹی کی جانب سے بڑا اعلان سامنے آگیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق فیصل آباد کی زرعی یونیورسٹی نے مغربی کلچر کیخلاف اعلان جنگ کردیا ہے، 14فروری کو ویلنٹائن ڈے کی جگہ سسٹرز ڈے منانے کا اعلان کردیا ہے ۔

پاکستان میں مغربی کلچر کے انکار کی صدائیں بلند ہونے لگیں، ویلنٹائن ڈے کے حوالے سے فیصل آباد کی زرعی یونیورسٹی نے بڑا فیصلہ کرلیا ۔ اسلامی روایت کو پروان چڑھانے کے لئے 14 فروری کو ویلنٹائن کی جگہ سسٹرز ڈے منایا جائے گا۔ اور کیمپس کی فیمیل طالب علموں کو سکاف اور عبایہ تخفے میں دئیے جائیں گے۔ یونیورسٹی کے وائس چانسلر ظفر اقبال رندھاوا نے کہا ہے کہ بعض مسلمانوں ویلنٹائن ڈے خوف میں بدل دیا ہے، میری سوچ یہ ہے کہ اگر اس دن آپ کو خوف ہورہا ہے تو اسے ایک موقع میں تبدیل کردیں۔ 

جامعہ کے وائس چانسلر ڈاکٹر ظفر اقبال رندھاوا کا کہنا ہے کہ لڑکے چودہ فروری کو اسکارف اور عبایا تحفے میں دیں گے، مخیر حضرات آگے آئیں اور اسکارف وغیرہ کیلئے فنڈز مہیہ کریں۔

وائس چانسلر زرعی یونیورسٹی فیصل آباد کہتے ہیں کہ اُن کے ہی ذہن میں یہ آئیڈیا آیا کہ ویلنٹائن ڈے کی جگہ بہنوں کا دن منانا چاہیئے جبکہ طلبہ کی جانب سے اس عمل کو سراہا جارہا ہے ۔

انہوں نے کہا کہ ہم اپنی ثقافت کو بھول رہے ہیں اور مغربی ثقافت کو اپنے اوپر حاوی کر رہے ہیں، طالبات کو اسکارف، شال تحفے میں دیئے جائیں گے، استاد ہونے کے ناطے ہمیں ہی اپنی روایات زندہ کرنا ہوں گی ۔



لعنت ہے مجھ پرکہ میں نے پاکستان تحریک انصاف کو سپورٹ کیا: عمران خان کے سب سے بڑے حامی خان صاحب کے خلاف ہوگئے

لعنت ہے مجھ پرکہ میں نے پاکستان تحریک انصاف کو سپورٹ کیا: عمران خان کے سب سے بڑے حامی خان صاحب کے خلاف ہوگئے

کراچی (ویب ڈیسک) نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں بات کرتے ہوئے معروف اور سینئیر صحافی و تجزیہ کار حسن نثار نے کہا کہ حکومت کے یہ جو پہلے پانچ ماہ ہیں اگر آپ میری عمر میں آئیں گے تو آپ کو یہ پانچ ماہ پندرہ ماہ لگیں گے۔ انہوں نے موجودہ حکومت کو آڑے ہاتھوں لیتے ہوئے کہا کہ ڈیلیور نہیں کر رہے کم از کم تمیز سے تو پیش آؤ اور خاموشی اختیار کرو۔

اللہ نے ہماری زبان کے آگے دانتوں کی دیوار لگائی ہے اُس کے آگے ہونٹوں کی بھی ایک دیوار ہے تاکہ ہم کم سے کم بولیں۔ حکومت کے کسی کام کا کوئی سر یا پیر نظر نہیں آرہا ۔کچھ پتہ نہیں چل رہا کہ آئی ایم ایف جائیں گے یا نہیں جائیں گے۔ حسن نثار نے کہا کہ یہ سب لوگ اب ٹاسک فورسز بنا رہے ہیں۔ آپ مجھے پانچ ماہ کا کہہ رہے ہیں یہ تو بائیس سال ہیں۔



پروگرام کے دوران حسن نثار نے کہا کہ مجھ پر بھی لعنت ہے کہ میں نے پاکستان تحریک انصاف کو سپورٹ کیا۔ میں نے یہ خیال کر لیا تھا کہ سائیڈ پر تیاری ہو رہی ہو گی، ٹیکنوکریٹس بیٹھے ہوں گے، پروفیشنلز بیٹھے ہوں گے، کام ہو رہا ہو گا اور جس دن یہ اقتدار میں آئیں گے سب ٹھیک ہوجائے گا لیکن افسوس کہ ان کی اس حوالے سے کوئی تیاری تھی ہی نہیں۔


پاکپتن اراضی کیس کی جے آئی ٹی رپورٹ منظر عام پر آگئی، ایسا انکشاف کہ (ن) لیگ والے شرمندہ ہو گئے

پاکپتن اراضی کیس کی جے آئی ٹی رپورٹ منظر عام پر آگئی، ایسا انکشاف کہ (ن) لیگ والے شرمندہ ہو گئے

اسلام آباد (ویب ڈیسک) پاکپتن اراضی کیس کی جے آئی ٹی رپورٹ منظر عام پر آگئی، ایسا انکشاف کہ (ن) لیگ والے شرمندہ ہو گئے۔ نواز شریف کی مشکلات میں کمی نہ آسکی، پاکپتن دربار اراضی کیس جوائنٹ انویسٹی گیشن ٹیم نے نواز شریف کو ذمہ دار قرار دے دیا ہے۔ سپریم کورٹ میں پاکپتن دربار اراضی الاٹمنٹ کیس کی سماعت ہوئی تو معاملے کی تحقیقات کرنے والی جے آئی ٹی نے زمین منتقل کرنے کے احکامات میں نواز شریف کو ذمہ دار قرار دے دیا۔ 


سپریم کورٹ نے جے آئی ٹی رپورٹ پر نواز شریف سے دو ہفتوں میں جواب طلب کرلیا ہے۔ عدالت نے پنجاب حکومت کو بھی اپنا جواب جمع کرانے کا حکم دیا ہے۔چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ زمین کی الاٹ منٹ کس نے کی تھی؟۔ جس پر سربراہ جے آئی ٹی نے بتایا کہ زمین الاٹمنٹ اس وقت کے وزیراعلی پنجاب نواز شریف نے کی تھی۔ 1985میں محکمہ اوقاف نے پاکپتن میں دربار بابا فرید کے گرد اپنی زمین قابض افراد سے واپس لینے کے لیے ایک نوٹیفیکیشن جاری کیا تھا جسے اس وقت کے وزیراعلیٰ پنجاب نواز شریف نے منسوخ کردیا تھا۔



چترال بائی پاس روڈ پر تین دکانیں جل کر خاکستر۔ دکانوں میں لاکھوں روپے کا سامان بھی جل گیا۔ متاثرین کا حکومت سے امداد کی اپیل

چترال بائی پاس روڈ پر تین دکانیں جل کر خاکستر۔ دکانوں میں لاکھوں روپے کا سامان بھی جل گیا۔ متاثرین کا حکومت سے امداد کی اپیل



چترال(گل حماد فاروقی) چترال پرانی سبزی منڈی کے قریب بائی پاس روڈ پر گزشتہ رات دکان میں اچانک آگ لگ گئی جس کے نتیجے میں تین دکانیں مکمل طور پر جل کر منہد م ہوگئے اور ان دکانوں میں پڑی ہوئی لاکھوں روپے کا سامان بھی جل کر خاکستر ہوگیا۔ ہمارے نمائندے سے باتیں کرتے ہوئے ایک متاثرہ دکاندار شکیل نے بتایا کہ رات تقریباً دس بجے آگ لگ گئی جس کا بظاہر وجہ بجلی کی شارٹ سرکٹ لگتا ہے مگر ہم نے فائر بریگیڈ والوں کو اسی وقت فون کیا جو یہاں سے صرف ایک کلومیٹر سے بھی کم فاصلے پر واقع ہے اور یہاں پہنچنے میں زیادہ سے زیادہ تین منٹ لگتے ہیں مگر فائر بریگیڈ والا نہیں آیا ۔ اس کے بعد ہم تھانہ چترال گئے اور پولیس کو بتایا کہ دکانوں میں آگ لگی ہوئی ہے مگر فائر بریگیڈ والا نہیں آگا جنہوں نے ایک بار پھر ان کو اطلاع دی اور فائر بریگیڈ یہاں آگ لگنے کے 55 منٹ بعد پہنچا مگر اس وقت ان کی آنے کا کوئی فائدہ نہیں تھا کیونکہ فائر بریگیڈ کے پہنچنے تک آگ نے باقی تین دکانوں کو بھی لپیٹ میں لے لیا اور اس کے اندر پڑی ہوئی لاکھوں روپے کا سامان مکمل طور پر جل کر خاکستر ہوگیا۔

اس سلسلے میں جب تحصیل میونسپل آفیسر نصیر قادر سے فائر بریگیڈ کی دیر سے آنے کی وجہ پوچھی تو انہوں نے جواب دیا کہ فائر بریگیڈ کی ذمہ داری ریسکیو 1122 کی ہے یہ میری ذمہ داری نہیں ہے کہ ان کو میں فایر بریگیڈ بھجواتا تاہم یہ ریسکیو 1122 کا دفتر بھی TMA کے اندر ہے۔ 

عوام اکثر یہ شکایت کرتے رہتے ہیں کہ تحصیل میونسپل انتظامیہ میں صرف ڈرائیوروں کا ایک فوج جم غفیر بھرتی ہوا ہے مگر ضرورت کے وقت یہ لوگ موجود نہیں ہوتے تو پھر اتنے بہت سارے ملازمین کس مرض کی دواء ہے ۔ 

متاثرین کا کہنا ہے کہ ان دکانوں میں ایک میڈیکل سٹور، ایک موبائل فون اور دو دکانوں میں جنر ل سٹو ر کا سامان تھا جن کی قیمیت ستر لاکھ بتائی جاتی ہے۔ متاثرین میں شرف الدین، رحمت الہی اور رحمت جان شامل ہیں۔ ان متاثرین نے حکومت سے اپیل کی ہے کہ ان کے ساتھ مالی مدد کی جائے تاکہ یہ لوگ اپنا کاروبار دوبارہ شروع کرواسکے اور اپنے اہل حانہ کیلئے رزق حلال کما سکے۔


14 جنوری، 2019

لطیفے ہی لطیفے : مزے کا لطیفے ☺

ایک لڑکی نے نجومی سے پوچھا کہ میرا ہاتھ دیکھ کر بتائیے میری شادی کب ہو گی
نجومی نے ہاتھ دیکھ کر کہا اسی سال
لڑکی نے کہا میرے لیے دو رشتے موجود ہیں 
ایک میری خالہ کا لڑکا ہے اور ایک میرے چچا کا
آپ یہ بتائیے ان میں سے کون خوش قسمت ہو گا
نجومی نے کہا چچا کا لڑکا
لڑکی بولی تو میری شادی چچا کے لڑکے سے ہو ر ہی ہے
نجومی بولا نہیں شادی خالہ کے لڑکے سے ہو گی خوش قسمت چچا کا لڑکا ہے۔

😜🤣😂😁




کراچی سے لاپتہ ہونے والی لڑکی خوش بخت کا پتہ چل گیا، کراچی میں لاپتہ ہونے والی لڑکی کا معمہ حل ہوگیا، اب یہ کہاں اور کس حال میں ہے؟ جاننے کے لئے پڑھیں

کراچی سے لاپتہ ہونے والی لڑکی خوش بخت کا پتہ چل گیا، کراچی میں لاپتہ ہونے والی لڑکی کا معمہ حل ہوگیا،  اب یہ کہاں اور کس حال میں ہے؟ جاننے کے لئے پڑھیں





چترال سمیت ملک کے مختلف علاقوں میں برف باری، مواصلاتی نظام متاثر: تصویروں چرون اویر کے لوگ اپنی مدد آپ کے تحت رابطہ سڑک برف ہٹا کر بحال کر رہے ہیں

چترال سمیت ملک کے مختلف علاقوں میں برف باری، مواصلاتی نظام متاثر: تصویروں چرون اویر کے لوگ اپنی مدد آپ کے تحت رابطہ سڑک برف ہٹا کر بحال کر رہے ہیں

 پاکستان کے شمالی علاقوں میں جہاں شدید برف باری نے سیاحوں کے لئے موسم سرما کا مزہ دوبالا کردیا ہے وہاں مقامی زندگیوں کے لڑے مشکلات میں بھی اضافہ کردیا ہے۔ نالے اور پائپ لائنیں جم گئی ہیں جسے پاانی کا مسئلہ درپیش آگیا ہے۔ بعض علاقوں میں رابطہ سڑکیوں بند ہونے سے آمدرفت بند ہے۔ سب سے زیادہ برف باری سکردو، مالم جبہ، کالام ، مری اور چترال میں پڑی ہے۔ شدہد برف باری سے بعض علاقوں میں لینڈ سلائیڈنگ کی بھی خبریں ہیں۔ 


زیر نظر تصویر میں چرون اویر کے لوگ اپنی مدد آپ کے تحت رابطہ سڑک برف ہٹا کر بحال کر رہے ہیں۔

تصاویر علی چترال





اس تصویر چترال کے گاؤں ریشن میں برف باری کا منظر دیکھا جاسکتا ہے۔

تصاویر مشاہد حسین





چترال - برف باری کے بعد سڑکوں، راستوں پر کھڑا پانی جم کر برف بن گئی، پیدل چلنا مشکل گاڑیاں بھی پھسل رہی ہیں

چترال - برف باری کے بعد سڑکوں، راستوں پر کھڑا پانی جم کر برف بن گئی، پیدل چلنا مشکل گاڑیاں بھی پھسل رہی ہیں 


چترال(گل حماد فاروقی) برف باری کے بعد اب عوام کیلئے مشکلات میں اضافے ہوا ہے سڑکوں اور راستوں پر کھڑی پانی رات کو موسم صاف ہونے کی وجہ سے جم کر برف بن چکی ہے اور اس پر چلنے والے نہ صرف پیدل لوگ پھسل جاتے ہیں بلکہ گاڑی بھی اس یح بستہ سڑ ک پر چلنا حطے سے حالی نہیں۔علاقے کے لوگ اکثر اپنی مدد آپ کے تحت ان راستوں سے برف ہٹا رہے ہیں تاکہ اس پر چلنے والے لوگ پھسل کر گرنے سے بچ جائے۔ 

لواری ٹنل کا راستہ بھی برف باری کے باعث بند ہے اور لواری سرنگ کے دونوں جانب یعنی دیر اور چترال کی جانب سڑک پر کھڑی پانی جم کر بالکل شیشہ کی طرح برف بن چکی ہے اور اس پر گاڑی چلنا ناممکن ہوا ہے اکثر گاڑی اس یح بن سڑک پر گزرتے ہوئے گرنے کا حطرہ ہوتا ہے۔ 
وادی کیلاش کی آحری گاؤں شیخانندہ میں مین گیل گول نالے میں برفانی تودہ گرنے سے بارہ افراد دب چکے تھے جن کو مقامی لوگوں نے اپنی مدد آپ کے تحت زندہ نکالنے میں کامیاب ہوئے تاہم دو افراد کو معمولی چوٹیں آئی ۔

برف باری کے بعد سردی کی شدت میں اضافہ ہوا ہے اور زیادہ تر لوگ گھروں میں بیٹھ کر آگ کے سامنے گرم ہوتے ہیں تاکہ خود کو سردی سے بچائے۔ مقامی لوگ مطالبہ کرتے ہیں کہ چترال کے لوگوں کو ملاکنڈ اور ہنزہ کی طرح سستی بجلی یا گیس فراہم کی جائے تاکہ وہ کھانا پکانے اور گرم ہونے کیلئے لکڑیوں کی بجائے گیس یا بجلی استعمال کرے تاکہ اس سے جنگلا ت کی بے دریغ کٹائی بند ہوسکے۔ س



چترال: وادی کیلاش سے متصل شیخانندہ کے رحمت آباد کے علاقے مین گیل گول نالے میں برفانی تودے تلے دبے چھ افراد کو زندہ نکال لیا گیا ۔ دو زحمی۔

چترال: وادی کیلاش سے متصل شیخانندہ کے رحمت آباد کے علاقے مین گیل گول نالے میں برفانی تودے تلے دبے چھ افراد کو زندہ نکال لیا گیا ۔ دو زحمی۔


چترال (گل حماد فاروقی) وادی کیلاش کے شیخانندہ کے علاقے میں مین گیل گول جو رحمت آباد کے قریب واقع ہے اس نالے میں برفانی تودے کے نیچے بارہ افراد دب چکے تھے تاہم علاقے کے لوگوں نے اپنی مدد آپ کے تحت ان سب لوگوں کو زندہ نکالنے میں کامیاب ہوگئے۔ 

ایس ایچ او تھانہ بمبوریت ابراہم شاہ کے مطابق برف کے نیچے چھ افراد دب چکے تھے جبکہ چھ افراد قریب ہی تھے اور وہ خود برف سے نکل گئے ہفتے کے روز سہہ پہر چار بجے کے قریب یہ واقعہ پیش آیا جس پر گاؤں کے لوگو ں نے اپنی مدد آپ کے تحت فوری طور پر موقع پر جاکر ملبہ ہٹایا اور ان لوگوں کو زندہ نکالا۔ پولیس کے مطابق ان میں دو افراد زحمی ہیں مگر ان کی حالت بھی حطرے سے باہر بتائی جاتی ہے۔ مقامی لوگوں کے مطابق یہ لوگ معجزاتی طور پر اس برفانی تودے کے ضد میں آکر بال بال بچ گئے ورنہ ان کے نیچے سے زندہ نکلنا نہایت مشکل ہے۔ 

واضح رہے کہ وادی کیلاش اور شیخانندہ کی سڑک اتنی حراب ہے کہ اس پر ریسکیو 1122 کی گاڑی کا چلنا ناممکن ہے اور سڑک کی حراب حالت کی وجہ سے کسی بھی حادثے کی صورت میں متاثرہ جگہہ تک بھاری مشنری کا پہنچانا نہایت مشکل نہیں بلکہ ناممکن ہے۔



تازہ ترین

مشہور اشاعتیں

تازہ ترین خبریں